The biography of Prophet Muhammad – Month 2

The biography of Prophet Muhammad – Month 2

31/365 سیرتِ مصطفیٰ ﷺ

فاطمہ رضی اللہ عنہا رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کی پانچویں اولاد ہیں۔ وہ بیٹیوں میں سب سے چھوٹی اور بچوں میں سب سے مشہور ہیں ۔ وہ اس وقت پیدا ہوئیں جبکہ پیارے نبی صلی اللہ علیہ وسلم کی عمر شریف پینتیس سال ہو گئ تھی ۔ یہ وہ وقت تھا جب قریش کعبہ کی تعمیر نو کر رہے تھے۔ تاریخ یہ بھی بتاتی ہے کہ اس وقت رسول اللہ ﷺ کی عمر اکتالیس سال تھی۔

فاطمہ وہ خوش نصیب بیٹی ہیں جو اپنے والد کے سب سے زیادہ قریب تھیں۔ نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم تمام راز اور دکھ اپنی بیٹی کے ساتھ بانٹتے تھے اور کبھی کبھی وہ ماں کا کردار ادا کرتی تھیں ۔ اسی وجہ سے انہیں اپنے والد کی والدہ کے طور پر خاص نام “ام ابیہا” پڑ گیا۔ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم فرمایا کرتے تھے کہ فاطمہ میرے جگر کا ٹکڑا ہے۔ تبلیغ کے ابتدائی ایام کی آزمائشوں کو دیکھنے اور تجربہ کرنے کا موقع ملا۔ پیاری فاطمہ رضی اللہ عنہا کی شادی رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کے چچا ابو طالب کے بیٹے علی رضی اللہ عنہ سے ہوئی۔ علی و فاطمہ کے گھر پانچ بچے پیدا ہوئے۔ تین بیٹے حسن، حسین، محسن اور دو بیٹیوں کے نام زینب اور ام کلثوم ہیں۔

رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے اپنی پیاری بیٹی فاطمہ کا تعارف “جنت کی ملکہ” کے طور پر کرایا، نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم اپنی بیٹی کو بہت سے خاص ناموں سے پکارتے تھے، ان میں سے “بتول اور زہرہ” کا نام مشہور ہے۔ لیکن عام طور سے آپ فاطمہ کے نام سے مشہور ہیں، رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کے وصال کے چھ ماہ بعد فاطمہ رضی اللہ عنہا بھی رخصت ہوئیں، گیارہویں سال ہجرت میں آپ کا انتقال ہو گیا، فاطمہ رضی اللہ عنہا کے ذریعے رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کا خاندانی سلسلہ جاری ہے۔

عبد اللہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کی چھٹی اولاد ہیں ۔ آپ کا یہ بیٹا اعلان نبوت کے بعد پیدا ہوا۔ لیکن قاسم کی طرح عبداللہ بھی چھوٹی عمر میں ہی فوت ہو گئے اس بیٹے کو خاص نام “طیب” اور “طاہر ” سے بھی پکارا جاتا تھا۔

سرکردہ مورخین میں سے کسی نے بھی اس نظریے کو قبول نہیں کیا کہ طیّب اور طاہر نام دو اور بیٹوں کے تھے۔

اس وقت عرب کا مروجہ رواج یہ تھا کہ پرورش کے لیے نوزائیدہ بچوں کو رضاعی ماؤں کو دینا تھا۔ لیکن رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کی پیاری بیوی نے اپنے تمام بچوں کو دودھ پلایا۔ ایک دفعہ آپ نے اپنے بچے کی وفات پر اپنا غم رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم سے بیان کیا اور آپ کی چھاتیاں دودھ سے بھری ہوئی تھیں۔کہنے لگیں اگر بچہ نہ مرتا تو میں دودھ پلانے کے قابل تھی۔ نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا کہ جنت میں بچے کو دودھ پلانے والی جنتی عورتیں ہیں۔ آپ نے خدیجہ رضی اللہ عنہا کو تسلی دیتے ہوئے پوچھا کہ کیا وہ ماں کا دودھ پیتے ہوئے بچے کی دھیمی آواز سن سکتی ہے؟

جب بھی بچہ پیدا ہوتا تو رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم عقیقہ کرتے اور گوشت تقسیم کرتے۔ عقیقہ میں لڑکے کے لیے دو بکریاں اور لڑکیوں کے پیدا ہونے پر ایک ایک بکری ذبح کرتے تھے ۔

جب رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کے دونوں صاحبزادے بچپن میں ہی فوت ہو گئے تو کچھ لوگوں نے نبی صلی اللہ علیہ وسلم پر “منقطع نسب والے شخص” ہونے کا الزام لگایا۔ یہ عاص بن وائل تھا جو قریش کا ایک ممتاز تھا جو الزام لے کر آیا تھا۔ قرآن کریم نے حضور صلی اللہ علیہ وسلم کی طرف سے جواب دیتے ہوئے فرمایا ۔ آپ منقطع النسب نہیں ہیں ۔ جس کا ذکر سورۃ الکوثر میں موجود ہے۔ نبی صلی اللہ علیہ وسلم کے خاندان کے افراد دنیا میں ایک واضح نسب کی تاریخ کے ساتھ رہتے ہیں۔ دنیا کا کوئی دوسرا شخص ایسی قطعی خاندانی روایت اور تاریخ کا دعویٰ نہیں کر سکتا۔

نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم اور خدیجہ رضی اللہ عنہا کی خاندانی زندگی میں ایک نیا مہمان آیا

32/365 سیرتِ مصطفیٰ ﷺ

ایک نیا شخص خاندان کے ایک فرد کی حیثیت سے رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کے خاندان میں داخل ہوتا ہے۔ یہ کوئی اور نہیں بلکہ زید ہیں جن کو عکاز بازار سے خریدا گیا تھا۔ یہ ایک اور واقعہ ہے جو حضور صلی اللہ علیہ وسلم کی سیرت و کردار کو روشن کرتا ہے۔ آئیے دیکھتے ہیں کہ زید نبی صلی اللہ علیہ وسلم کی زندگی میں کیسے آئے؟

حارثہ عرب کے مشہور قبیلہ کلب کے شرحیل کا بیٹا ہے۔ اس کی بیوی سودہ ہے جو قبیلہ “طوی” کے ثعلبہ کی بیٹی ہے۔ زید حارثہ اور سودہ کا پیارا بیٹا تھا۔ ان کا ایک امیر اور صاحب ثروت خاندان تھا۔ ایک دن سودہ اپنے چچا کے گھر ملنے گئی۔ اور بیٹا زید بھی ساتھ تھا۔ یہ وہ وقت تھا جب بنوالقین بن جزر، ڈاکوؤں کا ایک بدنام زمانہ گروہ چل رہا تھا۔ راستے میں سودہ اور زید کو مسلح ڈاکوؤں نے یرغمال بنا لیا۔ ماں اور بیٹے (سودہ اور زید) نے ڈاکوؤں سے انہیں آزاد کرنے کی التجا کی۔ انہوں نے سودہ کو آزاد کیا اور بیٹے کو اپنے ساتھ لے گئے۔ ان کا ارادہ زید کو غلاموں کے بازار میں بیچنا تھا۔

قسمت سے بچ جانے والی سودہ نے گھر پہنچ کر گھر والوں کو اطلاع دی۔ حارثہ اور اس کے بھائی کلب نے تمام جگہوں کی تلاشی لی .طاقتور قبیلے نے زید کی تلاش کے لیے ہر ممکن طریقے استعمال کیے ۔ لیکن نتیجہ مایوس کن تھا۔ زید نہیں مل سکا.. ڈاکوؤں نے زید کو غلام بنا لیا اور جلد از جلد دوسرے ملک بھیج دیا۔ حارثہ اپنے بیٹے کی عدم موجودگی کی وجہ سے گھبرا گیا تھا۔ اس نے ادھر ادھر گھوم کر تلاش کی۔ اسے امید تھی کہ کسی دن اس کا بیٹا مل جائے گا۔ اس نے فیصلہ کیا کہ وہ اسے کسی بھی قیمت پر تلاش کرے گا۔ اس نے عہد کیا کہ جب تک اس کا بیٹا نہیں مل جاتا زندگی سے لطف اندوز ہونے سے باز رہے گا۔ اس کا قبیلہ تلاش کرنے سے باز نہ آیا۔ آخر کار حارثہ رنجیدہ ہو گیا کہ اسے کوئی اطلاع نہیں ملی کہ اس کا بیٹا مر گیا یا زندہ۔ باپ کی بیٹے سے محبت کی یہ ایک نادر مثال بن گئی۔ حارثہ نے اپنے بیٹے کے کھونے پر افسوس کے ساتھ کئی نظمیں لکھیں۔ زید کی گمشدگی اور حارثہ کے اشعار آج بھی تاریخ میں پڑھے جاتے ہیں۔

زید پہلے ہی مکہ کے مشہور بازار عکاز میں فروخت ہونے والا غلام بن کر پہنچ چکا تھا۔ ایک دن رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کسی کام سے بازار تشریف لائے۔ آپ نے زید کو غلاموں میں اس کے چہرے کے خدوخال سے دیکھا۔ اس کی شکل و صورت اور انداز رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کو متوجہ کرتا تھا۔ آپ نے گھر جا کر اپنی پیاری بیوی خدیجہ رضی اللہ عنہا کو یہ بات بتائی۔ چلو اسے خریدتے ہیں .آئیے اسے اپنے بیٹے کے طور پر پالیں۔ مجھے اس میں اچھا مستقبل نظر آرہا ہے۔” بیوی نے اتفاق کیا، پیارے نبی صلی اللہ علیہ وسلم کا مفاد ان کے لیے ہمیشہ اپنی ذات سے زیادہ اہم تھا، بیوی نے فوراً اپنے بھائی حزام کے بیٹے حکیم کو بلایا، آپ نے ضروری رقم دی اور اسے بھیج دیا۔ حکیم جلدی سے بازار پہنچا اور زید کو چار سو درہم میں خرید لیا، اس وقت رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کی عمر اٹھائیس سال تھی جیسا کہ علی الخزاعی نے بیان کیا ہے؛ اعلان نبوت سے بارہ سال پہلے۔

اب زید کے آقا محمد صلی اللہ علیہ وسلم ہیں اور ان کی مالکن خدیجہ رضی اللہ عنہا ہیں۔ وہ جلدی سے نئے ماحول میں ڈھل گیا۔ خدیجہ رضی اللہ عنہا بہت خوش تھیں کہ وہ رسول اللہ ﷺ کو ایک اچھا تحفہ پیش کر سکیں۔ نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم خوش ہیں کہ ایک نیک خادم اور پیارا بیٹا ایک ساتھ مل گیا۔ زید خوش ہو گیا کیونکہ اسے ایک باپ اور ماں مل گئی جو اسے اس کے حقیقی والدین سے زیادہ پیار کرتے ہیں۔

نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم کی مسلسل رفاقت سے زید کے دل میں کچھ احساس پیدا ہوئے۔ ’’میرے آقا کوئی عام آدمی نہیں ہیں، ان کے پاس کوئی بڑی چیز آنی ہے۔

33/365 سیرتِ مصطفیٰ ﷺ

عبد المطلب کے پوتے الامین کے خادم زید کی مقامی لوگوں سے کافی واقفیت ہوگئی۔ زید محمد صلی اللہ علیہ وسلم کے ساتھ رہ کر کافی خوش تھے۔ انہیں گھر سے دوری کا کوئی غم نہیں تھا۔ انہیں اپنے نئے گھر سے ماں، باپ اور بھائی کا پیار اور دیکھ بھال ملی۔ اور انہوں نے اپنے مالک محمد صلی اللہ علیہ وسلم کے ارد گرد کچھ معجزاتی لمس محسوس کیا۔

وقت گزرتا گیا۔ یہاں تک کہ حج کا موسم شروع ہو گیا۔ دنیا کے مختلف حصوں سے لوگ مکہ پہنچنے لگے۔ ان میں سے بعض قبیلہ کلب سے بھی تھے۔ وہ زید سے ملے۔ زید نے ان سب کا بھی خیال رکھا ۔ انہوں نے زید سے اس کے نئے گھر اور مالک کے بارے میں پوچھا، اور اس کے ساتھ وقت گزارا۔ زید نے اپنے قبیلے کے لوگوں کو ایک نظم لکھ دی تھی جس میں نئے گھرانے، اور اس کے مالک کے بارے میں لکھا کہ وہ یہاں اطمینان کے ساتھ رہ رہا ہے۔ اور اپنے گھر والوں سے کہا کہ وہ اس سے پریشان نہ ہوں۔ یہ کہہ کر وہ اپنے مالک نبی صلی اللہ علیہ وسلم کے پاس چلا گیا۔

یہ خط زید کے والد حارثہ اور ان کے اہل خانہ تک پہنچا۔ وہ یہ جان کر خوش ہوئے کہ ان کا بیٹا زندہ ہے اور مطمئن ہے۔ لیکن وہ اپنے بیٹے کو غلام بنا ہوا نہیں دیکھ سکتے تھے۔ حارثہ نے اپنے بیٹے کو جلد از جلد غلامی سے آزاد کرنے کا سوچا۔ حارثہ نے اپنے بھائی کعب(جن کی مکہ میں بہت عزت تھی) کو ساری بات بتائی ۔اور بھاری رقم لے کر وہ اپنے بھائی کے ساتھ مکہ روانہ ہوا اور وہاں پہنچ گیا۔ وہ زید کے مالک محمد صلی اللہ علیہ وسلم کے پاس گئے اور کہنے لگے: “اے معزز انسان، اے عبدالمطلب اور ہاشم کے پوتے! ہم جانتے ہیں کہ آپ اس سرزمین پر فخر کرتے ہیں، قریش وہ ہیں جو اللہ تعالیٰ کے مہمانوں کو قبول کرتے ہیں۔ ہم جانتے ہیں کہ آپ متاثرین کی مدد کرنے والے اور غلاموں کو آزاد کرنے والے ہیں، اور، ہم اپنے بیٹے زید کو آزاد کرنے کے لیے حاضر ہیں، اور آپ کو تاوان کی رقم دینے کے لیے تیار ہیں، جتنی آپ چاہیں، آپ سے درخواست ہے۔ ہمارے ساتھ مہربانی فرمائیں ۔

’’تم کس کی بات کر رہے ہو؟‘‘ نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم نے تعجب سے پوچھا۔ “آپ کا خادم زید میرا بیٹا ہے” حارثہ نے وضاحت کی۔ “میں حارثہ ہوں، یہ میرا بھائی کعب ہے۔

پیغمبر ان کے ساتھ احترام سے پیش آئے۔ نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم نے انہیں بتایا کہ اگر وہ زید کے باپ ہیں تو وہ اسے اپنے گھر لے جا سکتے ہیں اگر زید اپنے والد کے ساتھ جانے کے لیے تیار ہو تو کوئی فدیہ نہیں۔ لیکن اگر وہ نبی صلی اللہ علیہ وسلم کو چھوڑنے پر راضی نہ ہوں تو انہیں ان کے ساتھ جانے پر مجبور نہیں کرنا چاہیے۔ انہوں نے جواب دیتے ہوئے کہا یہ ٹھیک ہے. ہم اس سے زیادہ کی توقع نہیں رکھتے

وہ اس ہدایت پر راضی ہوگئے۔ زید کو بلایا گیا، زید نے مہمانوں کو دیکھا، اور اپنے والد اور چچا کو دیکھ کر بہت خوش ہوئے۔ حارثہ بھی بہت خوش ہو گئے۔ عدم موجودگی کی اذیت سے وہ ملاقات کی خوشی میں سما گیا۔ پیارا بیٹا، جس کے بارے میں اس نے سوچا تھا کہ وہ دوبارہ کبھی نہیں ملے گا، وہیں صحت مند اور خوش مزاج کھڑا تھا۔ واقعی ایک ناقابل یقین ملاقات تھی ۔ نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم نے زید سے پوچھا کہ یہ کون ہیں تو انہوں نے کہا کہ یہ ان کے والد اور چچا ہیں۔ پھر انہیں ان کے والد اور چچا کا ارادہ بتایا گیا کہ اگر وہ تیار ہو تو اسے اپنے گھر واپس لے جائیں۔ اگر وہ ان کے ساتھ جانے پر راضی نہ ہو تو وہ نبی صلی اللہ علیہ وسلم کے ساتھ یہیں رہ سکتے ہیں۔

34/365 سیرتِ مصطفیٰ ﷺ

زیادہ سوچنے کے لیے کچھ بھی نہیں تھا۔ زید نے کہا میں یہیں رہوں گا۔ میں آپ کو چھوڑ کر کہیں نہیں جا رہا ہوں۔ آپ میرے لیے سب کچھ ہو۔ ماں اور باپ. حارثہ اور اس کا بھائی جواب سن کر حیران رہ گئے، انہیں کبھی توقع نہیں تھی۔ کیا !!. انہوں نے پوچھا. آپ کیا کہ رہے ہو؟ کیا تم اپنے ماں باپ کو چھوڑ کر غلام کی طرح زندگی گزارنا پسند کرتے ہو؟ اپنے گھر اور خاندان پر غلامی کا انتخاب کرتے ہو ۔ کیا حیران کن بات ہے

ہاں میرے والد، میں ان کو کبھی نہیں چھوڑوں گا۔ میں مستقبل میں اس عظیم ہستی سے کچھ معجزات کی توقع کر رہا ہوں۔ زید نے بات مکمل کرتے ہوئے کہا۔

میں اپنے بیٹے کو اس سے کیسے چھین سکتا ہوں جو اس سے اتنا پیار کرتا ہے؟ حارثہ کو احساس ہوا۔

ایک بار پھر زید کی امید اور اطاعت کے قائل ہو کر، رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے اس کا ہاتھ پکڑا اور صحنِ کعبہ کی طرف چل پڑے۔ حارثہ اور کعب ان کے پیچھے چلے۔ قریش کے سرداروں کی موجودگی میں رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے یہ اعلان فرمایا: پیارے لوگو… قریش خاندان، یہ حارثہ کا بیٹا زید ہے، میں اسے اپنا منہ بولا بیٹا قرار دیتا ہوں، وہ میرا وارث ہو گا اور میں بھی اس کا وارث ہوں گا۔ اس وقت کے اہم اعلانات کعبہ کے سائے میں ہوتے تھے، مکہ کے قائدین خانہ کعبہ کے صحن میں جمع ہو کر معاملات پر بحث کرتے تھے۔

حارثہ اور کعب کو تسلی ہوئی کہ زید اب غلام نہیں رہا وہ اب ‘الامین’ کا بیٹا ہے۔ کسی بھی صورت میں وہ اپنے بیٹے کو الامین سے الگ نہیں کر سکتے۔ انہیں اپنے درمیان محبت کی گہرائی اور وسعت کا احساس ہو گیا ہے۔ حارثہ اور کعب اپنے بیٹے کو مکہ میں چھوڑ کر اپنے ملک واپس چلے گئے۔ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم اور زید نے انہیں ان کے ملک روانہ کیا۔ اگرچہ وہ اپنے بیٹے کو ساتھ نہیں لے جا سکے لیکن وہ اس اطمینان کے ساتھ گھر پہنچے کہ وہ محفوظ ہاتھوں میں ہے۔ گھر والوں کے پاس گئے اور معلومات شیئر کیں۔ سننے والوں کے پاس کہنے کو کچھ نہیں تھا۔ بعد میں زید کے گھر والے اکثر مکہ آتے اور ان سے ملاقات کرتے۔

زید رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کے سایہ میں پلے بڑھے۔ زید رضی اللہ عنہ کا مرتبہ بھی رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کے مرتبہ کی وجہ سے بڑھ گیا۔ زید ایک اچھے گواہ کے طور پر تاریخ میں آئے جو رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم سے متعلق تمام معاملات کو جانتے تھے۔ خاندانی اور عوامی معاملات .زید نے پیغمبر اسلام صلی اللہ علیہ وسلم کی تبلیغ کے ابتدائی دنوں میں ہی مسلمان ہونے کا اعلان کیا۔ والد حارثہ بھی اسلام لے آئے۔ زید نے سائے کی طرح نبی صلی اللہ علیہ وسلم کی پیروی جاری رکھی اور برکتیں حاصل کیں۔ آپ کو وہ واحد صحابی (صحابی رسول) ہونے کا شرف حاصل ہوا جن کا نام قرآن پاک میں مذکور ہے۔

زید ان نایاب لوگوں میں سے تھے جو اعلان نبوت سے پہلے اور بعد میں نبی صلی اللہ علیہ وسلم کے قریب تھے۔ آپ صلی اللہ علیہ وسلم کی سیرت، زندگی اور طرز عمل کے بارے میں علم کے مستند ذرائع میں سے ایک تھے۔

آزمائش کے ایام میں ،رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کی زندگی کے بابرکت لمحات میں آپ کے ساتھ اکثر مواقع پر زید گواہ، حاضر اور کبھی رفیق تھے۔ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کے تاریخ پڑھنے میں یہ خوش نصیب پیروکار کئی بار آئے گا۔ خاندانی زندگی کے حسن اور میدان جنگ میں بہادری میں ان کا مقام تھا۔

دنیا کی تاریخ میں کسی شخصیت کی عظمت کی نشان دہی کرنے کا ایسا واقعہ نایاب ہوگا۔

بعد میں پڑھیں گے کہ زید کس مرتبہ تک پہنچے ۔ اب ہم عوامی میدان میں رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کی مداخلت کے ایک اور باب کی طرف بڑھ رہے ہیں۔

35/365 سیرتِ مصطفیٰ ﷺ

پیارے نبی صلی اللہ علیہ وسلم ایک نوجوان کے طور پر قائدانہ زندگی گزار رہے تھے جو مکہ میں سب کو قابلِ قبول تھی۔ کئی مواقع ایسے آئے جس نے آپ کی مقبولیت کو ثابت کیا۔ ان میں خانہ کعبہ کی تعمیر نو اہم تھی۔

واقعہ کچھ یوں ہے۔ ایک عورت نے خانہ کعبہ کے احاطے میں کھانا پکانے یا کسی اور چیز کے لیے آگ جلائی۔ چنگاری آئی اور کعبہ کے “کسوا” (غلاف کعبہ کا سیاہ کپڑا) پر گری۔ آگ سے خانہ کعبہ کی عمارت کو بھی نقصان پہنچا۔ تعمیر نو کے بغیر آگے بڑھنا ناممکن تھا۔ مؤرخین لکھتے ہیں کہ اچانک تعمیر نو کی دو اور وجوہات بھی تھیں۔

پہلی وجہ یہ ہے کہ پانی کے تیز بہاؤ کی وجہ سے خانہ کعبہ کو نقصان پہنچا۔ خانہ کعبہ پہاڑوں سے گھری ہوئی جگہ پر واقع ہے۔ پہاڑی پانی جو کئی بار بہتا ہے اس نے خانہ کعبہ کی دیواروں کو نقصان پہنچایا تھا۔

دوسری وجہ تھی خانہ کعبہ میں لوٹ مار۔ چوروں نے خانہ کعبہ کے اندر سے کئی قیمتی سامان چوری کر لیا۔ خانہ کعبہ کے اندر ایک دیوار میں رکھے ہرن کے سونے کے دو مجسمے اور دیگر جواہرات قبیلہ خزاعہ سے تعلق رکھنے والے ذویک کے گھر سے برآمد ہوئے۔ اس نے دعویٰ کیا کہ کچھ چور اسے اس کے احاطے میں چھوڑ گئے تھے۔ لیکن جامع پوچھ گچھ سے یہ بات سامنے آئی کہ، ذویک ہی اصل ڈاکو تھا۔ اسے ہاتھ کاٹ کر سزا دی گئی۔ ایسی کوششوں کو دوبارہ ہونے سے روکنے کے لیے خانہ کعبہ کی تعمیر نو ضروری ہو گئی۔

اسی دوران ایک اور سازگار صورتحال پیدا ہو گئی۔ روم کے بادشاہ کا ایک جہاز سمندر میں سے گزر رہا تھا۔ یہ قیمتی تعمیراتی سامان سے بھرا ہوا تھا۔ یہ جہاز پتھروں، درختوں اور لوہے کے ساتھ ایتھوپیا جا رہا تھا۔ جدہ کے قریب پہنچا تو تیز طوفان کی وجہ سے جہاز کو ساحل پر جانا پڑا۔ چنانچہ جہاز جدہ کی بندرگاہ پر لنگر انداز ہو گیا۔ سامان کے ساتھ ‘باقوم’ نامی ایک مجسمہ ساز بھی سوار تھا۔

قریش کو معلوم ہوا کہ سامان کے ساتھ جہاز جدہ کی بندرگاہ پر لنگر انداز ہو گیا ہے۔ ولید بن مغیرہ کی قیادت میں ایک گروہ یہ سوچ کر جدہ کی بندرگاہ پر گیا کہ وہ موقع سے فائدہ اٹھا سکتے ہیں۔ انہوں نے جہاز کے حکام سے ملاقات کی اور بات چیت کی۔ تعمیراتی سامان خریدنے پر اتفاق ہوا اور مجسمہ ساز باقوم کی نگرانی کی پیشکش بھی کی گئی۔

خانہ کعبہ کی تعمیر نو کے لیے تمام تیاریاں مکمل کر لی گئیں۔ وہ فوری طور پر تعمیر نو شروع کر سکتے تھے۔ لیکن پہلے انہیں موجودہ حصے کو منہدم کرنا تھا۔ لیکن ان میں سے کسی نے پتھر ہٹانے کی ہمت نہیں کی۔ آخر کار ایک پتھر ہٹا دیا گیا۔ وہ تین دن انتظار کرتے رہے کہ پتھر ہٹانے والے پر کوئی آفت آئے گی یا نہیں۔ کچھ بھی نہیں ہوا تو اسے ایک اچھی علامت سمجھتے ہوئے انہوں نے موجودہ عمارت کو منہدم کرنے کا فیصلہ کیا۔

ولید بن المغیرہ اور عائد بن عمرو المخزومی کی امامت میں دعائیں کی گئیں۔ اسی دوران ایک واقعہ پیش آیا۔ عائد نے ایک پتھر ہٹایا لیکن وہی پتھر عائد کے ہاتھ سے پھسل کر اپنی اصلی حالت پر آکر لگ گیا۔ اس نے وجہ سمجھنے کی کوشش کی تو وہ اس نتیجے پر پہنچا۔ کہ یہ خالق کی طرف سے ایک یاد دہانی ہے۔ انہیں تعمیر نو کے لیے صرف جائز دولت استعمال کرنی چاہیے۔ بدکاری، جوئے یا ڈکیتی کے ذریعے حاصل کی گئی ایسی جائیداد کو استعمال نہ کرنے کا فیصلہ کیا گیا۔ فیصلے کے مطابق قریش کے پاس جائز اتنی جائیداد نہیں تھی کہ وہ سارا خانہ کعبہ جو حضرت ابراہیم علیہ السلام نے بنایا تھا تعمیر کر سکیں۔ لہٰذا خانہ کعبہ کے شمال کی جانب نیم دائرہ دار حصہ کو صرف بنیاد کے طور پر رکھنا پڑا ۔

خانہ کعبہ کی تعمیر کا کام تیز رفتاری سے جاری ہوا۔ تعمیراتی سرگرمیاں ہر ایک خاندان کو ہر حصے میں سے تفویض کرکے منظم کی گئیں۔

36/365 سیرتِ مصطفیٰ ﷺ

فیصلے کے مطابق خانہ کعبہ کے داخلی دروازے اور متعلقہ حصوں کی تعمیر بنو زہرہ اور بنو عبد مناف کے خاندانوں کو تفویض کی گئی۔ اس حصے کی تعمیر کے لیے رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے خدمت انجام دی۔ حجرالاسود سے رکن الیمانی تک کا حصہ مخزوم خاندان اور اس کی ذیلی جماعتوں کا تھا۔ بنو جحم اور بنو سہم اوپر والے حصے کی تعمیر کے انچارج تھے۔ حجرالاسود کی تعمیر کی ذمہ داری بنو عبد الدار، بنو عزہ، بنو اسد اور بنو عدی کی تھی۔

تعمیراتی کام خوبصورتی سے انجام دیا گیا۔ تعمیر رومی مجسمہ ساز باقوم اور قبطی نسل کے بڑھئی کی نگرانی میں ہوئی تھی۔ یہ دیوار خانہ کعبہ کے قریب پہاڑ کے پتھروں سے بنائی گئی تھی۔ بعد کے زمانے میں وہ پہاڑ جبل کعبہ کے نام سے مشہور ہوا۔ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کی سب سے بڑی خدمت پتھر اٹھانا تھی۔ اس وقت کپڑا تہہ کرنے اور کندھے پر ڈالنے کا چرچا ہوا۔

خانہ کعبہ کی تعمیر مکمل ہونے کے بعد تنازعہ کھڑا ہوگیا۔ یہ تنازع حجر اسود یا حجر اسود کی بحالی کا تھا جو خانہ کعبہ کے جنوب مشرقی کونے میں تھا۔ آسمانی پتھر کو دوبارہ نصب کرنا ہر قبیلے کا فخر تھا، جو اس کی پاکیزگی کے لیے مشہور تھا۔ ہر قبیلے نے اس کا دعویٰ کیا۔ بنو عبد دار نے شہریوں کا خون ایک پلیٹ میں جمع کیا۔ انہوں نے اس میں اپنے ہاتھ ڈبوئے اور عہد کیا کہ وہ مقدس پتھر کو دوبارہ نصب کریں گے۔ بنو عدی بن کعب نے بھی اسی طرح قبول کیا اور مسئلہ مزید سنگین ہو گیا۔ منظر کشمکش کے دہانے میں بدل گیا۔

قریش کے رہنماؤں نے اس کا حل تلاش کیا۔ وہ خانہ کعبہ کے صحن میں جمع ہوئے اور اس معاملے پر گفتگو کی۔ قریش کے سب سے بڑے رہنما ابو امیہ نے اسے مغیرہ بن المخزوم کے سپرد کیا۔ مغیرہ نے کہا اے قریش میں ایک حل پیش کرنا چاہتا ہوں، جو دروازے سے پہلے آئے وہ حجر اسود کو بحال کر دے، سب نے اس رائے پر اتفاق کیا۔

سب نے غور سے دیکھا۔ یہ جاننے میں زیادہ دیر نہیں لگی کہ پہلے کون آتا ہے۔ ایک شخص آتا ہے۔ سب نے یک زبان ہو کر نعرہ لگایا۔ “ھذا الامین” – یہ الامین یا محمد ﷺ ہیں۔ سب نے کہا… ہم متفق ہیں..

رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے مقامی لوگوں کے مباحثوں یا فیصلوں میں شرکت نہیں کی تھی۔ وہ عاجزی سے لوگوں کے پاس آئے انہوں نے رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کو فیصلے سے آگاہ کیا۔ وہ عاجزی سے مسئلہ حل کرنے کے لیے آگے آئے ۔

انہیں سوچنے کی ضرورت نہیں تھی۔ آپ نے ہدایت کی۔ ’’ایک بڑا کپڑا لاؤ۔ وہ لے آئے۔ آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے اسے زمین پر پھیلا دیا۔ آپ نے تمام قبیلوں کے سرداروں کو بلایا۔ وہ سب کپڑے کے کونے پکڑتے ہیں۔ وہ بیک وقت کپڑے کو حجر اسود کی سطح تک لے جاتے ہیں۔ سب نے الامین کو ان کے دانشمندانہ اور حکمت بھرے فیصلے پر مبارکباد دی۔

عظیم شاعر ہبیرہ بن ابی وہب۔ جو واقعات کا عینی شاہد تھا، اس نے ایک نظم گائی ۔

اس گیارہ سطری نظم میں رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کی عظمت اور اس واقعہ کی اہمیت بیان کی گئی ہے۔

37/365 سیرتِ مصطفیٰ ﷺ

نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم مکہ میں اس طرح پرورش پارہے ہیں کہ آپ سب کے لئے توجہ کا مرکز بن چکے ہیں اس کے ساتھ ساتھ دنیا کے کئی حصوں میں موعود پیغمبر کے بارے میں بحثیں بھی چل رہی ہیں۔ ساری دنیا خیر کے پیامبر کی منتظر تھی۔ ہر طرف اندھیرا تھا۔ پوری دنیا روشنی کی کرن کی توقع کر رہی تھی۔

آئیے کچھ شہادتوں کے بارے میں پڑھتے ہیں جو اس معلومات کو واضح کرتی ہیں کہ نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم ہی موعود نبی ہیں۔
نبی صلی اللّٰہ علیہ وسلم ‘وید’ کے لوگوں میں سرگرم ہو گئے۔ اور کاہن اور پنڈت بتانے لگے۔ اس وقت مکہ میں رہنے والے فلسفیوں نے تحقیق شروع کی۔ اسی دوران مکہ میں ایک تہوار تھا۔ تہوار کا جشن بت پر مرکوز تھا، جس کا نام ‘بوانا’ تھا… یہ ان رسومات کا تسلسل ہے جو ہر سال ہوتی ہیں۔ اس دوران چار لوگ ایک بہت ہی نجی گفتگو کے لیے جمع ہوئے۔ انہوں نے باہمی اتفاق کیا کہ بات چیت اور فیصلے خفیہ ہونے چاہئیں۔ ان کی بحث کا نچوڑ یہ تھا۔ ‘جن آدرشوں یا طرز عمل کی لوگ اب پیروی کر رہے ہیں، انہیں کسی بھی طرح سے جائز قرار نہیں دیا جا سکتا۔ وہ محض بتوں کی پوجا اور طواف کر رہے ہیں جن کا کوئی فائدہ یا نقصان نہیں ہے۔ یہ کبھی درست نہیں ہے۔ ان چاروں افراد نے معاشرے کے عمومی تصور سے ہٹ کر سچائی تلاش کرنے کا عہد کیا۔ ورقہ بن نوفل، عبید اللہ بن جحش، عثمان بن الحویرث اور زید بن عمرو بن نوفل یہ چار افراد تھے۔

ورقہ بن نوفل نے ویدوں کا مطالعہ کیا اور کئی علاقوں کا سفر کیا۔ انبیاء کے راستوں کو سمجھا۔ موسیٰ اور عیسیٰ علیھما السلام اور ان کے راستے کے مطابق زندگی بسر کی۔ وہ مکہ میں مشہور وید عالم بنے۔اسلام قبول کیا اور پیغمبر صلی اللّٰہ علیہ وسلم کی حوصلہ افزائی کی ۔

عبید اللہ بن جحش نے کسی خاص مذہب کو قبول نہیں کیا۔ اس نے آزادانہ طور پر سچائی کی تلاش کی۔ یہ وہ وقت تھا جب رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے اپنا مشن شروع کیا تھا۔ ام حبیبہ (قریش کے سردار ابو سفیان کی بیٹی) ان کی بیوی تھیں۔ انہوں نے ابتدائی مرحلے میں ہی اسلام قبول کر لیا۔ بیوی کے بعد عبید نے بھی اسلام قبول کیا۔ انہوں نے مکہ میں مسلمانوں پر ہونے والے فتنوں کا مشاہدہ کیا۔ وہ اپنی بیوی کے ساتھ اپنے گروپ کے ساتھ ایتھوپیا چلا گیا۔ لیکن جب وہ ایتھوپیا پہنچا تو وہ کچھ عیسائی پادریوں کے جال میں پھنس گیا۔ اس نے عیسائیت قبول کر لی اور ان میں شامل ہو گیا۔ بعد میں، وہ ایک عیسائی کے طور پر مر گیا. ام حبیبہ، ایک پختہ ایمان والی، اسلام میں رہتی تھیں۔ بعد ازاں آپ صلی اللہ علیہ وسلم کی بیوی کے لقب سے نوازا گیا۔ ام حبیبہ رضی اللہ عنہا مومنین کی ماں بنیں۔

تیسرے، عثمان بن الحویرث جنہوں نے برسوں پہلے حق کی تلاش شروع کی۔ واقعہ کچھ یوں ہے۔ ایک تہوار کے دوران۔ عثمان مذکورہ تینوں کے ساتھ موجود تھے۔ سب لوگ ایک بت کو خوش کر رہے تھے۔ تاڈی پینا اور جشن منانا۔ لیکن جس آئیکن کی وہ پوجا کر رہے تھے وہ مضبوط نہیں تھا۔ جب بھی سیدھا رکھا تو الٹا گر گیا۔ کئی بار کوشش کی گئی کوئی فائدہ نہیں ہوا۔ کیا وجہ ہوگی؟! کچھ رجحان ہے۔ عثمان نے سوچا۔ یہ کیا ہو سکتا ہے؟ بعد میں انہیں یقین ہو گیا کہ وہ رات وہ رات تھی جب آمنہ رضی اللہ عنہا نے نبی صلی اللہ علیہ وسلم کو جنم دیا تھا۔

اس نے محسوس کیا کہ شرک کا بت اور تصور بے معنی ہے۔ اس نے اس خیال پر مشتمل ایک نظم پڑھی۔ اس نے کہیں سے ایک گانا سنا جو اسی خیال کو بیان کرتا ہے۔ تصویریں کیوں گریں اس نظم میں تھا۔ یہ چاروں کے اس گروپ کے الگ الگ خیالات کا آغاز تھا۔

38/365 سیرتِ مصطفیٰ ﷺ

عثمان بن الحویرث نے حق کی تلاش جاری رکھی۔ اس نے رومی شہنشاہ قیصر سے ملاقات کی۔ قیصر نے عرب سے آنے والے عالم کی عزت کی۔ عثمان نے عیسائیت اختیار کی۔ آپ صلی اللہ علیہ وسلم کے اعلان نبوت فرمانے سے پہلے ہی اس کا انتقال ہو گیا۔

چوتھا زید بن عمرو بن نفیل ہے۔ وہ ایک مفکر اور فلسفی تھے۔ انہوں نے عرب میں جو برائیاں چل رہی تھیں ان پر کڑی تنقید کی۔ انہوں نے نہ بتوں کی پرستش کی اور نہ ہی شرک کو قبول کیا۔ بتوں کو نذرانہ پیش کرنے سے انکار کیا ۔ وہ لڑکیوں کو زندہ دفن کرنے کے رواج کے خلاف کھڑے ہوئے اور ان لڑکیوں کو گود لیا جنہیں قبروں میں لے جایا جاتا تھا۔ وہ عیسائیت یا یہودیت پر یقین نہیں رکھتے تھے انہوں نے سچی توحید (ایک خدا پر یقین) اور حضرت ابراہیم علیہ السلام کا راستہ حاصل کیا۔ حضرت ابوبکر رضی اللہ عنہ کی بیٹی اسماء رضی اللہ عنہا ایک تجربہ بیان کرتی ہیں۔ ایک دفعہ زید بن عمرو ایک جماعت میں تقریر کر رہے تھے تو انہوں نے کہا کہ اے قریش اس گروہ میں صرف میں ہی ہوں جو ابراہیم علیہ السلام کے دین کو مانتا ہے ۔

وہ اکثر کہا کرتے تھے کہ اے اللہ میں تیری عبادت کرنا نہیں جانتا۔ اگر مجھے معلوم ہوتا تو میں ویسا ہی کرتا۔ پھر سواری پر سجدہ کرتے۔

بخاری شریف میں ان کے سفر حق کی تفصیل ہے۔ عبداللہ بن عمر رضی اللہ عنہما سے روایت ہے۔ ظہور اسلام سے پہلے زید بن عمرو حق کے متلاشی کے طور پر شام آئے تھے۔ انہوں نے ایک یہودی پادری سے ان کے مذہب کے بارے میں پوچھا۔ آخر کار اس سے پوچھا کہ کیا میں اس دین میں شامل ہو جاؤں؟ پادری نے کہا، “آج یہودیت بالکل ٹوٹ چکی ہے۔” اگر آپ موجودہ یہودی مذہب میں شامل ہو جاتے ہیں، تو آپ کو خالق کے غضب کا سامنا کرنا پڑے گا۔ آپ اللہ کی ناراضگی بھی کما سکتے ہیں۔ نہیں میں نہیں کرتا۔ “میں یہاں اللہ کے غضب سے بچنے اور اس کی خوشنودی حاصل کرنے آیا ہوں۔ کیا آپ کوئی اور راستہ بتا سکتے ہیں؟” زید نے پوچھا۔

عالم نے یوں کہا۔ ’’ حنیفی راستہ‘‘ یا ’’صراط مستقیم‘‘ کو قبول کرنے کے سوا کوئی چارہ نہیں۔ سیدھا راستہ کون سا ہے؟ زید نے پوچھا۔ عالم نے بات جاری رکھتے ہوئے کہا۔ یہ ابراہیم علیہ السلام کا راستہ ہے۔ وہ نہ یہودی تھے اور نہ عیسائی۔ انہوں نے حنیفی یا صراط مستقیم پر عمل کیا۔ وہ صرف اللہ تعالیٰ کی عبادت کرتے تھے ۔

زید نے پھر سفر جاری رکھا۔ اس کی جستجو ختم نہیں ہوئی۔ اس وقت اس کی ملاقات ایک عیسائی پادری سے ہوئی۔ اس نے بھی یہودی عالم کی طرح جواب دیا۔

زید نے راہ ابراہیمی کی خبر سنی تو کہا اے اللہ! بے شک میں ابراہیم کے راستے پر کھڑا ہوں، تو میرا گواہ ہے۔

زید کی تلاش کا ایک اور واقعہ درج ذیل ہے۔ زید نے حق کی تلاش میں سفر شروع کیا۔ وہ زمینوں پر گھومتا رہا۔ وہ الجزیرہ اور موصل میں گھومتا رہا – اور آخر کار ‘بلقا’ کے علاقے میں پہنچ گیا۔ اسے ایک عالم ملا جس نے ویدوں کا گہرا مطالعہ کیا ہوا تھا۔ اس نے اسے سیدھا راستہ (حنیفی راستہ) دکھانے کو کہا۔ اس نے کہا بھائی جس راستے کی تم تلاش کر رہے ہو وہ آج کہیں نہیں مل سکتا لیکن سچے رسول کے آنے کا وقت قریب ہے جو سیدھے راستے پر ہونگے، رسول تمہاری ہی سرزمین میں تشریف لائیں گے، جلدی سے اس زمین پر چلے جاؤ۔ آمد بہت قریب ہے۔” اس مقدس رسول کے ساتھ شامل ہونے کی کوشش کرو۔

39/365 سیرتِ مصطفیٰ ﷺ

زید بہت خوش تھا۔ وہ اپنے ملک روانہ ہو گیا۔ اس نے اپنی تلاش کے اختتام تک پہنچنے کی خواہش کے ساتھ سفر کیا۔ اس نے کئی سڑکیں پار کیں اور کئی دروازوں پر دستک دی۔ آخر کار وہ منزل پر پہنچ گیا۔ وہ ‘لخم’ کے علاقے میں پہنچا۔ حملہ آوروں نے اسے پکڑ لیا۔ جب موت یقینی ہو گئی تو نماز پڑھی۔ اور دعا کی میں اپنے مقصد تک نہیں پہنچ سکا۔ میں ‘حنیفی راستے’ تک نہ پہنچ سکا۔ میرے بیٹے سعید کے لیے وہ راستہ نہ روک، اے خالق! شریر لوگوں نے اسے مار ڈالا۔ ان کی آخری دعا اللہ نے قبول فرمائی۔ زید کا بیٹا صحابی (رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کا پیروکار) بن گیا، ان کا شمار ان دس بزرگوں میں ہوتا ہے جنہیں جنت میں داخل ہونے کی بشارت ملی۔

زید کی وفات کی خبر مکہ میں پہنچی۔ ورقہ بن نوفل متلاشی حق کی موت کو برداشت نہ کر سکے۔ غم زدہ، اس نے خوبصورت نظمیں لکھیں۔ زید کی راہ حق میں دلچسپی کے بارے میں لکھنے کے بعد اس نے نظم میں کہا۔ ’’یقیناً تم حضرت ابراہیم سے ملاقات کرو گے۔ اگر تم زمین کے نیچے سات وادیوں کے برابر ہو تب بھی تم پر اللہ کی رحمت ہو گی۔

زید اچھے شاعر بھی تھے۔ صحیفوں میں ان کی طرف بہت سی سطریں منسوب ہیں جو توحید کی عظمت کا ذکر کرتی ہیں۔ اسے ایک خدا کا سچا ماننے والا سمجھا جائے۔ بعد کے زمانے میں نبی صلی اللہ علیہ وسلم نے ان کی تعریف کی۔ حدیث میں دیکھا جا سکتا ہے۔ پیارے نبی صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا۔ اللہ اسے آخرت میں ایک آزاد برادری کے طور پر اکیلا لائے گا۔ ایک اور روایت میں ہے کہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے زید کے بارے میں فرمایا۔ ”میں جنت میں داخل ہوا تو میں نے وہاں زید بن عمرو کے دو باغ دیکھے۔

جہاں کہیں اندھیرا ہو وہاں صراطِ مستقیم کے روشن چراغ اِدھر اُدھر ہی رہتے ہیں۔ پوری دنیا ایک نبی کی آمد کی منتظر ہے۔ کچھ لوگ نبی صلی اللہ علیہ وسلم کی سرزمین کی طرف سفر کر رہے ہیں۔ کچھ راستے میں ہی دم توڑ گئے۔ کچھ جلدی پہنچ گئے اور امید ظاہر کی۔ دنیا خود استقبال کے لیے تیار ہے۔ سب کی نظریں وادی تہامہ کی طرف ہیں۔ وقت تہامہ میں چھوٹی چھوٹی حرکتوں کا بھی انتظار کرتا ہے۔

وہ جگہ جہاں بنو قریظہ قبیلہ مدینہ میں رہتا تھا۔ شام سے ایک یہودی پادری وہاں آکر آباد ہوا۔ یہ واقعہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کے اعلان نبوت سے دو سال پہلے کا ہے۔ اس کا نام ابن حیبان تھا۔ وہ ایک تارک الدنیا راہب تھا اور وید اور روحانیت کی تعلیم حاصل کرتا تھا۔ رفتہ رفتہ وہ مدینہ میں سب کے لیے مقبول ہو گیا۔ جب بارش نہ ہوتی تو اہل مدینہ اس کے پاس آتے اور کہتے اے! ابن حیبان براہ کرم باہر آئیں اور ہمارے لیے بارش کی دعا کریں۔ پھر وہ کہتا کہ تھوڑی سی کھجور یا جو یا اس جیسی کوئی چیز دو۔ فوراً لوگ خیرات لے پہنچتے پھر کسی کھلی جگہ پر اکٹھے ہوتے۔ وہ ابن حیبان کی امامت میں بارش کی دعا کرتے۔ گروہ کے منتشر ہونے سے پہلے بارش ہو جاتی۔ اہل مدینہ کئی بار ایسے تجربات دیکھ چکے تھے۔

دن گزرتے گئے اور ابن حیبان بیمار پڑ گیا۔ سب نے اس کی عیادت کی۔ اس نے پوچھا اے یہودیوں تم جانتے ہو کہ میں اپنا وطن اور گھر چھوڑ کر یہاں کیوں آیا ہوں۔

40/365 سیرتِ مصطفیٰ ﷺ

اس نے ایک بار پھر پوچھا۔ ‘تمہیں معلوم ہے کہ میں تمام آسائشیں چھوڑ کر یہاں کیوں رہ رہا ہوں’؟ جن لوگوں نے یہ سوال سنا، انہوں نے اس سے وجہ بتانے کی اپیل کی۔ وہ نہیں جانتے۔ وہ کہنے لگا۔ میرے یہاں آنے کی ایک وجہ ہے۔ یہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کی آمد کا وقت ہے۔ یہ وہ سرزمین ہے جس کا وعدہ کیا گیا ہے کہ وہ نبی صلی اللہ علیہ وسلم یہیں داخل ہوں گے۔ یہ وہ سرزمین ہے جس کی طرف انہیں ہجرت کرنی ہے۔ میں یہ سوچ کر یہاں آیا تھا کہ اگر وہ آجائیں تو میں ان کے ساتھ شامل ہو سکوں۔ اے یہود.. اگر نبی صلی اللہ علیہ وسلم تشریف لائیں تو تم جلد ان کی پیروی کرنا ان کے پیروکار بنیں۔ اس غلط فہمی میں نہ رہنا کہ جب حق کا رسول آئے گا تو لڑائی اور خونریزی ضرور ہو گی۔ وہ حق کے رسول اور آخری نبی ہوں گے۔

ابھی زیادہ عرصہ نہیں گزرا تھا کہ ابن الحیبان رخصت ہوئے۔ وہ نیک بندہ جو آخری نبی صلی اللہ علیہ وسلم کے دیدار اور استقبال کا انتظار کر رہا تھا انتقال کر گیا۔ لیکن اس نے جو الفاظ آخر میں کہے وہ بہت سے لوگوں کی یاد میں رہے۔ قبیلہ ہذیل سے تعلق رکھنے والے اسید بن سعد اس کے بھائی صعلبہ اور دوست اسید بن الحریر نے بعد میں ابن الحیبان کی آخری نصیحت کا احترام کرتے ہوئے رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کی پیروی کی۔

بعد میں رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے مدینہ کی طرف ہجرت کی اور وہاں پہنچ گئے۔ پہلے تو یہودی دشمنی کے ساتھ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کے خلاف ہو گئے۔ لیکن بنو قریظہ کی جنگ کے بعد ان کا رویہ بدل گیا۔ پھر کچھ لوگوں نے اس طرح کہا۔ ’’اس میں کوئی شک نہیں کہ یہ سچا نبی ہے جس کی پیشین گوئی ہمارے متقی ابن حیبان نے کی تھی۔‘‘ بہت سے لوگ سیدھے حضور صلی اللہ علیہ وسلم کی زیارت کرنے آئے اور انہوں نے اسلام قبول کیا ۔

محمد صلی اللہ علیہ وسلم کی نبوت کا اعلان کوئی اچانک واقعہ نہیں تھا۔ وقت اور دنیا نشاۃ ثانیہ کے ایک ہیرو کی توقع کر رہے تھے۔ ویدوں اور علماء نے یاد دلایا تھا کہ ایک مقدس روح کو آخری نبی مقرر کیا جائے گا۔ اس عظیم ہستی کی شناخت محمد صلی اللہ علیہ وسلم کے نام سے ہوئی جو عبداللہ کے بیٹے تھے۔ محمد صلی اللہ علیہ وسلم خود اس یقین کی طرف بڑھ رہے تھے کہ انہیں ایک مشن پر لے جایا جا رہا ہے۔ اعلان نبوت اس وقت آیا جب تمام تیاریاں مکمل ہو چکی تھیں۔

رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے جو خواب دیکھے وہ آپ کے مشن کا پیش خیمہ تھے۔ عائشہ رضی اللہ عنہا فرماتی ہیں کہ وحی الٰہی کے ایک حصے کے طور پر نبی صلی اللہ علیہ وسلم نے ابتدا میں اچھے خواب دیکھے۔ ان کے خواب دن کی طرح روشن تھے۔ یعنی ان کے خواب پورے ہوتے تھے۔

اسی دوران رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے بہت سے خواب دیکھے جو ان کے لیے سنجیدہ خیالات پیش کرتے تھے۔ مستند حوالوں سے پتہ چلتا ہے کہ اعلان نبوت سے پہلے تقریباً چھ ماہ خوابوں کا دور تھا۔ ایسے ہی خوابوں میں سے ایک خواب یہ بھی تھا جس میں ایک شخص نے دوسرے شخص سے پوچھا۔ کیا یہ وہ شخص نہیں جن سے ہماری مراد تھی؟ حضور صلی اللہ علیہ وسلم یہ دیکھ کر چونک گئے۔ اگلی صبح رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے ابو طالب کو اپنے خواب کے بارے میں بتایا۔ انہوں نے کہا فکر نہ کرو یہ صرف ایک خواب ہے۔ آپ صلی اللہ علیہ وسلم کو تسلی دی۔ خواب دہرایا تو ابو طالب کو اطلاع دی گئی۔ وہ اپنے بھتیجے کو ساتھ لے کر ایک مشہور حکیم کے پاس گئے ۔ حکیم نے کہا اے ابو طالب تمہیں فکر کرنے کی ضرورت نہیں۔ آپ کے بھتیجے کو کچھ نہیں ہوا۔ وہ ایک اچھا انسان ہے۔ اس شخصیت کے ذریعے بہت سی اچھی چیزیں آنے والی ہیں۔ شیطان کا قبضہ یا اس جیسی کوئی چیز ان کے ساتھ کبھی نہیں ہوگی۔ یہ وہ شخص نہیں ہیں جو اس کا شکار ہوں۔ یہ وہ تمام نشانیاں ہیں جن سے معلوم ہوتا ہے کہ اس شخصیت پر ناموس (جبرائیل) کا آنا بہت قریب ہے۔

41/365 سیرتِ مصطفیٰ ﷺ

نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم میں خود اعتمادی ہو رہی تھی۔ جنہوں نے دیکھا اور سنا وہ محمد صلی اللہ علیہ وسلم میں خدا کے پیغام کے ظہور کی امید رکھتے تھے۔ بار بار اردگرد نبی صلی اللہ علیہ وسلم کو کچھ نہ کچھ سنائی دیتا ہے۔

امام مسلم رضی اللہ عنہ سے منقول حدیث میں ہے کہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا: مکہ میں ایک پتھر تھا، وہ مجھے اعلان نبوت سے پہلے بھی سلام کرتا تھا، میں اسے اب بھی جانتا ہوں۔ اس واقعے تک ہی محدود نہیں ہے بلکہ ایک پتھر کی طرح اور بہت سے مظاہر اور چیزوں نے رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کو سلام کیا، اسے حضرت علی رضی اللہ عنہ کے اس قول سے بھی سمجھا جا سکتا ہے: وہ فرماتے ہیں کہ جب ہم مکہ میں نبی صلی اللہ علیہ وسلم کے ساتھ تھے، مکہ کے کچھ مضافات سے گزر ہوا تو ہم نے دیکھ کہ جب ہم پہاڑوں اور درختوں والے علاقے سے گزر رہے تھے تو ہر درخت اور پہاڑ آپ صلی اللہ علیہ وسلم کو سلام پیش کر رہا تھا، میں اسے صاف سن سکتا تھا۔

احادیث اور تاریخی کتب میں اس قسم کے بہت سے واقعات موجود ہیں۔ اس میں شک کرنے کی ضرورت نہیں کہ ایسی چیزیں ہو سکتی ہیں۔ ان کو استعارے سے تعبیر کرنے کی ضرورت نہیں۔ کیونکہ ایسے واقعات اللہ تعالیٰ نے نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم کو بطور معجزہ عطا کیے تھے۔ مجزہ کے ایک حصے کے طور پر کچھ بے جان چیزیں اس طرح کا برتاؤ کرتی ہیں۔ قرآن پاک میں ان چٹانوں کا ذکر ہے جو اللہ کے خوف سے لڑھک جاتے ہیں۔ قرآن پاک یہ بھی کہتا ہے کہ کوئی چیز ایسی نہیں جو اللہ کی حمد و ثنا نہ کرتی ہو۔ یہ امام نووی رحمہ اللہ کی تفسیر کا حصہ ہے۔

اعلانِ نبوت سے پہلے رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کو بہت سی لایعنی آوازیں سنائی دیتی تھیں۔ ایک مرتبہ آپ نے اپنی پیاری بیوی خدیجہ رضی اللہ عنہا سے فرمایا کہ اے! خدیجہ مجھے کچھ بے ساختہ آوازیں سنائی دیتی ہیں۔ مجھے کچھ خاص روشنیاں نظر آتی ہیں۔ اس کی کیا وجہ ہوگی؟ مجھے خدشہ ہے کہ میرے ساتھ کوئی ناخوشگوار واقعہ پیش نہ آ جائے۔ سمجھدار پیاری بیوی، خدیجہ رضی اللہ عنہا نے کہا۔ ‘پریشان ہونے کی کوئی بات نہیں ہے۔ خدا کی قسم آپ کے ساتھ خیر کے سوا کچھ نہیں ہوگا۔ کیا آپ وہ نہیں ہیں جو ایمانداری اور خاندانی رشتوں کی پیروی کرتے ہیں؟ کچھ بھی خطرناک نہیں ہوگا۔

نبی صلی اللہ علیہ وسلم بدلتے رہے۔ ایک عظیم مشن پر جانے کی تیاریاں۔ اللہ اپنے رسول کو تیار کر رہا ہے۔ وہ پوری دنیا کی اصلاح کے لیے امن کا ضابطہ پیش کرنے کی تیاری کر رہا ہے۔ اس وقت جب رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم اکیلے سفر میں تھے تو صحرا سے کوئی شخص آپ کو سلام کرتا اور آپ کو پکارتا کہ یا رسول اللہ!

اور بعد میں ‘تنہائی’ ان کے لیے ترس گئی۔ وہ تنہا اللہ کے بارے میں سوچتے اور اس کی عبادت کرتے۔ یہ تنہائی رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے کسی وجہ سے نہیں بنائی تھی۔ ان فلسفیوں کے برعکس جنہوں نے سماجی برائیوں میں فکر مندی کا انتخاب کیا۔ اور نہ ہی یہ کچھ مخصوص عملی منصوبوں کے ساتھ منصوبہ بندی کی طرح تھا۔ یہ وہ خلوت ہے جسے اللہ نے آخری رسول کے طور پر منتخب کرنے کے لیے دیا تھا۔ پیارے نبی صلی اللہ علیہ وسلم نے اس میں حقیقی لذت پائی۔ انہیں مکہ میں جبل النور کی چوٹی پر واقع غار حرا میں خصوصی تنہائی کے لیے بلایا گیا۔

42/365 سیرتِ مصطفیٰ ﷺ

غار حرا کی کچھ خصوصیات تھیں۔ پہلی یہ کہ اگر اس کے اندر بیٹھیں تو خانہ کعبہ کو براہ راست دیکھ سکتے ہیں۔ دوسرا۔ یہ کہ یہ وہ غار تھا جہاں رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کے دادا عبدالمطلب مراقبہ کیا کرتے تھے۔ کچھ حوالہ جات ہیں کہ غار حرا نے رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کو خوش آمدید کہا۔ امام قلائی رحمہ اللہ کی تصریح اس طرح ہے۔ ہر سال رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم غار حرا میں ایک مہینہ تنہائی میں گزارا کرتے تھے۔ قریش میں ایسا رواج تھا۔ اس خلوت کو ‘تہنّس’ بتوں سے دور رہنا یا ‘تہنف’ صراطِ مستقیم کی تلاش کے نام سے جانا جاتا۔

رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم ایک مہینے کی خلوت کے بعد وہاں آنے والوں کو کھانا کھلاتے تھے۔ مراقبہ کے بعد سیدھے خانہ کعبہ کی طرف آتے اور سات مرتبہ طواف کر کے اپنے گھر جاتے تھے ۔

اس بارے میں مختلف آراء ہیں کہ آپ جب غار حرہ میں پہنچتےتو کتنے دن ٹھہرتے. کچھ روایات میں کہا گیا ہے کہ اگر یہ رمضان المبارک کا مہینہ ہو تو تین، سات، یا ایک ماہ تک۔ ایک ماہ سے زیادہ ٹھہرنے کی کوئی روایت نہیں ہے۔ اس کے بعد ضروری کھانا لے کر روانہ ہو جاتے۔ ایک قسم کا کیک اور زیتون کا تیل غار میں لے جاتے۔

آپ کی زوجہ محترمہ حضرت خدیجہ رضی اللہ عنہا نے غار حرہ میں نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم کی عبادت میں دل و جان سے مدد کی۔ جب رزق کی تنگی ہوتی تو وہ ضروری سامان لے کر پہاڑ پر چڑھ جاتیں۔ “جبل النور” گھر سے چار میل دور ہے۔ غار تک پہنچنے کے لیے وادی سے آٹھ سو ستر میٹر بلند پہاڑ پر چڑھنا پڑتا لیکن ایک بار بھی آپ نے کوئی ناپسندیدگی کا اظہار نہیں کیا۔ آپ کی زوجہ محترمہ ہر وقت مکمل تعاون کے ساتھ خدمت میں پیش پیش رہیں۔ ان واقعات سے ثابت ہوتا ہے کہ یہ خوش نصیبی تھی کہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے خدیجہ رضی اللہ عنہا کو اپنی بیوی کے طور پر منتخب کیا۔

کچھ دنوں خدیجہ رضی اللہ عنہا نے بھی شوہر کی خدمت میں پہاڑی میں قیام کیا۔ پھر گھر کو نیچے آئیں ۔

بعض اوقات وہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کو غار میں بھیج دیتیں اور گھر میں دن گنتی رہتیں۔ اس کے بعد وہ کچھ دیر جبل النور کی طرف دیکھتی اور پھر وادی النور کی طرف چل پڑتیں۔ نیچے سے پہاڑ کی طرف دیر تک دیکھتیں ۔ اس وقت تک رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم بھی پہاڑ سے نیچے اتر چکے ہوتے۔ وہ خوشی سے ملاقات کرتیں اور اس دن وہیں رہتیں۔ گھر سے لایا ہوا کھانا پیش کرتیں۔ صبح ہوتے ہی نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم پہاڑ کی چوٹی پر تشریف لے جاتے۔ اس طرح بعد میں اس جگہ پر ایک مسجد بنائی گئی جہاں انہوں نے وہ رات گزاری۔ وہ ہے مسجد الاجابہ ۔

ایک دن جب خدیجہ رضی اللہ عنہا پہاڑ پر چڑھ کر چوٹی پر پہنچیں تو پیارے نبی صلی اللہ علیہ وسلم کہیں نظر نہ آئے۔ آپ نے چاروں طرف تلاش کیا ۔اور بلند آواز سے پکارا۔ پھر حاضرین کو پہاڑ کے اطراف میں بھیج دیا گیا۔ اس وقت رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کو ایک کونے میں بیٹھے مراقبہ میں دیکھا گیا۔ حاضرین نے خدیجہ رضی اللہ عنہا کو مطلع کیا۔ وہ بات چیت کر کے واپس چلے گئے۔

بعض اوقات آپ توقع سے پہلے پہاڑ سے نیچے آجاتے کیونکہ جو کھانا آپ اپنے ساتھ لے جاتے وہ کسی ضرورت مند کو عطیہ کر دیتے۔

اگر کچھ خاص تجربات ہوتے تو آپ اپنی محبوب بیوی کے ساتھ شیئر کرتے۔ سمجھدار بیوی صبر سے سنتی اور پرسکون انداز میں بات کرتی…..

43/365 سیرتِ مصطفیٰ ﷺ

غار حرا میں قیام کے دوران رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے کون سی عبادت کی تھی؟ علماء نے مختلف آراء درج کی ہیں۔ ایک یہ کہ یہ پچھلے انبیاء کی عبادت تھی۔ لیکن انہوں نے یہ نہیں بتایا کہ کس نبی کا طریقہ تھا۔ یہاں آٹھ آراء کا ذکر کیا گیا ہے۔ ابن برہان کہتے ہیں کہ یہ جد امجد حضرت آدم علیہ السلام کا سلسلہ تھا۔ وہ تمام انبیاء کے باپ ہیں۔ امام عمودی نے کہا کہ یہ حضرت نوح علیہ السلام کا طریقہ تھا۔ جیسا کہ انہیں “شیخ الانبیاء” کا خطاب حاصل ہے۔ ایک اور قول ہے کہ یہ حضرت ابراہیم علیہ السلام کا طریقہ تھا۔ وہ “خلیل اللہ” کے لقب کے ساتھ ایک نبی ہیں۔ اور ‘ابراہیمی راستہ’ بتانے والی قرآنی آیت بعد میں نازل ہوئی ہے۔ چوتھا اور پانچواں قول حضرت موسیٰ علیہ السلام اور حضرت عیسیٰ علیہ السلام کا ہے۔ ان کے لقب بالترتیب “کلیم اللہ” اور “روح اللہ” ہیں۔ ایک اور مشاہدہ یہ ہے کہ یہ پچھلے انبیاء کی عبادت کے طریقوں کی تالیف تھی۔ اگلا قول یہ ہے کہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کو اللہ تعالیٰ کی طرف سے خاص روحانی طریقے عطا کیے گئے تھے۔ مذکورہ بالا آخری نقطہ نظر پر غور کرتے ہوئے، امام ابن حجر رحمہ اللہ کہتے ہیں کہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے اللہ تعالیٰ کی طرف سے کچھ خاص روحانی ہدایات حاصل کیں اور ان پر عمل کیا۔

اس زمانے میں اصل عبادت غور و فکر تھی۔ یا اللہ کی نشانیوں اور اس کی عظمت کے بارے میں سوچنا۔ وہ لوگ ہیں جنہوں نے اس دور کو روحانی رسومات کی تکمیل کے لیے تپسیا (خلوت) کے دور کے طور پر پیش کیا (ریاضہ:)۔ دوسرے لفظوں میں دنیاوی معاملات سے دور رہ کر غور و فکر میں گزارا ہوا وقت ہے۔

غار حرا میں قیام کے دوران رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کو دن بدن مختلف روحانی تجربات ہو رہے تھے۔ ایک موقع ایسا تھا۔ عمرو بن شرحبیل کہتے ہیں۔ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے اپنی پیاری بیوی خدیجہ رضی اللہ عنہا سے فرمایا۔ جب میں اکیلا ہوتا ہوں تو روشنی کی خاص کرنیں میرے سامنے نمودار ہوتی ہیں اور مجھے کچھ آوازیں سنائی دیتی ہیں کہ میں جبرئیل ہوں…” خدیجہ یہ کیا ہے….مجھے ڈر ہے کہ کچھ ہو نہ جائے، خدیجہ رضی اللہ عنہا کہتیں “ڈرنے کی کوئی بات نہیں۔ آپ کو کچھ بھی نقصان نہیں ہوگا۔

تھوڑی دیر بعد ابوبکر رضی اللہ عنہ وہاں تشریف لائے۔ خدیجہ رضی اللہ عنہا نے ابوبکر رضی اللہ عنہ کو واقعہ کی اطلاع دی۔ آپ نے فرمایا: تم ورقہ بن نوفل کے پاس جاؤ اور بات کرو۔ وہ صحیفوں کے بہت بڑے عالم ہیں”۔ پھر ابوبکر رضی اللہ عنہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کے ساتھ ورقہ کے پاس گئے۔ انہوں نے اسے سب کچھ تفصیل سے بتایا۔ “میں جبریل ہوں” کے نام کی آواز کے بارے میں بتایا گیا تو ورقہ نے کہا.. سُبوح…سبوح…۔ اس مشرکین کی سرزمین میں جبرئیل علیہ السلام کا نام لیا جاتا ہے۔ یہ جبریل وہ فرشتہ ہے جو اللہ اور اس کے رسول کے درمیان مشن کو پہنچاتا ہے۔ پریشان ہونے کی کوئی بات نہیں ہے۔

ایک بار جب نبی صلی اللہ علیہ وسلم رات کو اکیلے چل رہے تھے تو ایک آواز آئی۔ ”السلام ” آپ جلدی سے گھر چلے گئے۔ بیوی خدیجہ رضی اللہ عنہا کو تجربے کے بارے میں بتایا۔ جواب کچھ یوں تھا۔ “السلام ” امن کا پیغام ہے، صرف اچھی چیزیں ہوں گی، فکر کی کوئی بات نہیں۔

بعد ازاں انہوں نے ورقہ کے ساتھ اپنے نئے تجربات شیئر کئے۔ تو ورقہ نے کہا بیٹا خوش رہو، خوش رہو، یہ “ناموس” ہے جو عیسیٰ ابن مریم کے پاس آیا تھا، وہ اب تمہارے پیچھے آ رہا ہے۔

44/365 سیرتِ مصطفیٰ ﷺ

رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کو پیغمبرانہ ذمہ داری سونپنے کے پہلے مرحلے کا ایک بیان یہ ہے: رمضان کے آخر میں، رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم غار حرا میں عبادت کر رہے تھے۔ ہفتہ اور اتوار کی رات جبریل علیہ السلام نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم کے پاس آئے۔ پیر کی رات جبریل اور میکائیل علیہما السلام ایک ساتھ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کے سامنے حاضر ہوئے۔ میکائیل علیہ السلام آسمانوں اور زمین کے درمیان ہوا میں کھڑے تھے۔ ایک فرشتے نے دوسرے سے پوچھا ٫کیا یہ وہی نہیں ہیں جن کا ہم نے ارادہ کیا تھا؟ جی ہاں. ‘یہ وہی ہیں’. دوسرے نے جواب دیا۔ لیکن آئیے ان کو کسی سے وزن کریں’ پھر رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم وزن میں دوسرے شخص سے بہتر ہو گئے۔ ایک کے بجائے دس آدمیوں کے ساتھ وزن کرنے کا حکم ہوا اس وقت بھی رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم وزن میں زیادہ تھے۔ یہی حال رہا جبکہ ایک ہزار لوگوں کے ساتھ آپ کا وزن کیا گیا۔ آخرکار کہنے لگے۔ رب کعبہ کی قسم خواہ پوری امت اس شخص کے دوسری طرف رکھ دی جائے تو وہ ان سب پر غالب آئے گا۔

پھر موتیوں اور جواہرات سے مزین ایک خاص چٹائی بنائی گئی اور اس پر رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کو بٹھایا گیا۔ ‘اس شخص کے باطن کو پاک کرو’۔ ایک نے کہا۔ انہوں نے ایسا ہی کیا۔ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کے جسم سے خون کا جمنا جو (انسانی فطرت میں) شیطانی اثر کا شکار ہوتا ہے۔ ایک نے کہا: اندر کو اچھی طرح دھو کر پاک کر لو۔ پھر جسم کے کھلے حصے پر ٹانکے لگائے گئے۔ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم اچھی طرح بیٹھے ہوئے تھے۔

بعد ازاں انہیں نبوت کا مشن سونپا گیا۔ پھر آپ کو ہمت حاصل کرنے کے لیے ضروری تمام چیزیں دی گئیں۔ جبرائیل علیہ السلام نے رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم سے پڑھنے کو کہا…. آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا: میں پڑھنے والا نہیں ہوں۔ جبرائیل علیہ السلام نے فوراً آپ صلی اللہ علیہ وسلم کو سینے لگا لیا۔

رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے سینے کی ٹھنڈک کو محسوس کیا۔ پھر جبرائیل علیہ السلام نے پڑھنے کو کہا… میں پڑھنے والا نہیں ہوں .. رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے انہیں تین بار جواب دیا۔ پھر جبرائیل علیہ السلام نے سورۃ القلم کی ابتدائی آیات کو پڑھنا شروع کیا۔ “پڑھو اپنے رب کے نام سے جس نے تمہیں پیدا کیا، اسی نے انسان کو “علق” (خون کے لوتھڑے) سے پیدا کیا، پڑھو…. تمہارا رب کریم ہے، اس نے قلم سے سکھایا ہے۔”

میں قاری نہیں ہوں” کا جملہ اس لیے اہم ہے کہ آپ نے کسی استاد سے پڑھنا یا لکھنا نہیں سیکھا۔ لیکن جب آپ اللہ کا نام لے کر پڑھنے کو کہا گیا تو نبیﷺ نے انکار نہیں کیا۔ کیونکہ تب اللہ نے آپ پڑھنے کی صلاحیت پہلے ہی دے رکھی تھی۔ دوسرے لفظوں میں جو کچھ نبی صلی اللہ علیہ وسلم کو دیا گیا تھا وہ اللہ تعالیٰ نے آپ کو خاص دیا تھا۔ عربی لفظ اُمّی کے معنی ہیں وہ جو حروف کا علم نہ رکھتا ہو۔ لیکن نبی صلی اللہ علیہ وسلم کے معاملے میں لفظ ‘امّی’ کا یہ مطلب نہیں ہے۔ اس کا مطلب یہ ہے کہ آپ نے عام طریقہ سے علم حاصل نہیں کیا جیسا کہ دوسرے کرتے ہیں۔ نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم کے علم پر سب حیران رہ گئے جب آپ نے عملی طور پر کچھ سیکھے بغیر علم کی تمام شاخوں کو سنبھال لیا۔

غار حرا سے قرآن پاک حاصل کرنے کے بعد نبی صلی اللہ علیہ وسلم گھر تشریف لے گئے۔ دونوں طرف کے پتھر اور شاخیں آپ صلی اللہ علیہ وسلم کو سلام کہہ رہے تھے۔ موصول ہونے والے صحیفے اور ذمہ داری کا وزن بہت اچھا تھا۔ آپ کا دل دھڑکتا رہا۔ خدیجہ رضی اللہ عنہا کو پکارتے ہوئے گھر پہنچے… مجھے چادر اوڑھا دو… مجھے چادر اوڑھا دو.. خدیجہ رضی اللہ عنہا نے جلدی سے آپ کو چادر اوڑھا دی۔ خدیجہ رضی اللہ عنہا کو یہ یقین تھا کہ آپ بہت بڑی نعمت ملی ہے۔ لیکن مشن کی سنجیدگی نے انہیں متاثر کیا .خدیجہ رضی اللہ عنہا تسلی دینے والے الفاظ کہنے لگیں۔

45/365 سیرتِ مصطفیٰ ﷺ

پیارے نبی صلی اللہ علیہ وسلم بیان کرنے لگے۔ خدیجہ میں اکثر تمہیں کسی ایسے شخص کے بارے میں کہتا تھا جو میرے خوابوں میں آتا ہے۔ یہ دراصل فرشتہ جبرائیل ہے۔ آج وہ سیدھا میرے پاس آیا۔ میری پیاری بیوی، میں بہت خوفزدہ تھا، یہ کیا ہو رہا ہے؟ آپ نے غار حرا میں ہونے والے تمام واقعات کو بیان کیا۔ فوراً خدیجہ رضی اللہ عنہا نے کہا آپ کو کسی چیز سے ڈرنے کی ضرورت نہیں۔ کسی بھی صورت میں، آپ کے ساتھ صرف اچھا ہی ہوگا کیونکہ آپ خاندانی رشتوں کو جوڑتے ہیں۔ صرف سچ بولتے ہیں مہمانوں کی مہمان نوازی کرتے ہیں۔ امانتوں کی حفاظت کرتے ہیں ۔ پناہ گزینوں کی حمایت کرتے ہیں۔ دوسروں کے غم اور بوجھ کو دور کرتے ہیں۔ خدا کی قسم وہ آپ کو رسوا نہیں کرے گا۔ تو جو اللہ کی طرف سے آئے اسے قبول کرو۔ یہ صرف سچائی ہو سکتی ہے۔

آپ نے اپنے پیارے شوہر کو تسلی دی اور آرام کروایا۔ پھر خدیجہ رضی اللہ عنہا باہر آئیں۔ عتبہ کے خادم عداس سے ملاقات ہوئی۔ وہ نینوا کی سرزمین سے ایک خالص عیسائی تھا۔ خدیجہ نے اس سے پوچھا کہ اے عداس کیا تم کسی بات کا قطعی جواب دو گے؟ کیا آپ کو جبرئیل کا کوئی علم ہے؟ عداس نے فوراً کہا قدوس “مبارك”مبارك” اس سرزمین میں جہاں بتوں کی پوجا کی جاتی ہے جبرائیل کو کیا کام؟ وہ تعجب میں پڑ گیا۔ کیا آپ مجھے بتا سکتے ہیں کہ آپ کو موصول ہونے والی معلومات سے جبریل کون ہے؟ خدیجہ رضی اللہ عنہا نے پوچھا۔ عداس نے وضاحت کی۔ ‘اللہ کے وفادار پیامبر۔ وہ فرشتہ جو پیغمبروں تک اپنا پیغام پہنچاتا ہے۔ انبیاء سابقین حضرت موسیٰ اور عیسیٰ علیھما السلام کے قریبی دوست۔ عداس یہ کہ کر رک گیا۔ خدیجہ رضی اللہ عنہا گھر واپس آگئیں۔ اور نبی صلی اللہ علیہ وسلم کو ساتھ لے کر ورقہ بن نوفل کے پاس تشریف لے گئیں ۔

.سب کچھ واضح طور پر پیش کیا گیا. سب کچھ غور سے سننے کے بعد ورقہ نے اس طرح جواب دیا۔ ’’تمہیں خوش ہونا چاہیے۔ آپ وہ رسول ہیں جس کی پیشین گوئی عیسیٰ ابن مریم نے کی تھی۔ یہ وہی ‘ناموس’ یا جبریل ہیں جو حضرت موسیٰ کے پاس آئے تھے وہ اب آپ کے پاس آئے ہیں۔

بلاشبہ آپ وہ نبی ہیں جنہیں تبلیغ کا کام سونپا جائے گا۔ آپ کو جنگ/جہاد کرنے کا حکم دیا جائے گا۔ لوگ آپ پر تنقید کریں گے۔ آپ کو اس شہر سے نکال دینگے ۔ آپ کو ہراساں کیا جائے گا۔ میں زندہ رہوں گا تو آپ کو مضبوط سہارا دوں گا۔ ‘کیا مجھے یہ ملک چھوڑنا پڑے گا؟ .رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے تعجب سے کہا۔ ہاں، ورقہ نے بات جاری رکھتے ہوئے کہا۔ حق کے ساتھ آنے والے تمام انبیاء کو تنقید کا نشانہ بنایا گیا ہے۔ ہراساں کیا گیا ہے. پھر وہ اپنی نشست سے اٹھے اور رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کے سر کو احترام سے چوم لیا۔ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم اور خدیجہ رضی اللہ عنہا گھر واپس آگئے۔ ورقہ اعلان نبوت سے پہلے ہی اس دنیا سے رخصت ہو گئے۔

رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم تین دن تک گھر میں رہے۔ آپ کی ذمہ داری کی عظمت کے بارے میں خیالات بڑھ گئے۔ جبریل سے ملاقات کا خوف ان سے ملنے کی خواہش میں بدل گیا۔ ملاقات کا خوف اور اضطراب ختم ہوگیا۔ اب امید کا وقت تھا۔ گھر سے باہر نکلے، کعبہ کے قریب وادی میں گئے۔ آواز سنی۔ یہ کون ہو سکتا ہے؟ چاروں طرف دیکھا، کوئی نظر نہیں آیا۔ یا…محمد..اے محمد کی صدائیں سنائی دیں۔رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے آنکھیں اٹھائیں. وہ فرشتہ جبرائیل علیہ السلام تھے جو حرا میں نظر آئے… ایک شاندار نظارہ۔ جبریل کے بیٹھنے کی جگہ قابل فخر تھی۔ وہ نشست جو کہیں بھی چھوئے بغیر ماحول سے معمور تھی۔ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم میں ایک بار پھر ہلکا سا خوف ظاہر ہوا۔ ایک قدرتی خوف جب آسمان زمین کو گلے لگاتا ہے۔ پھر آپ گھر کی طرف چل دیئے ۔

46/365 سیرتِ مصطفیٰ ﷺ

نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم نے خدیجہ رضی اللہ عنہا کو بلایا۔ میری پیاری بیوی، براہ کرم میرے جسم کو ٹھنڈا کریں۔ یہ بہت گرم ہے. ایسا لگ رہا ہے جیسے مجھے بخار ہے۔ بیوی نے نہانے کے لیے ٹھنڈا پانی تیار کیا۔ غسل کے بعد دوبارہ آرام کرنے لگے تھوڑی دیر بعد جبریل علیہ السلام تشریف لائے۔ آپ صلی اللہ علیہ وسلم کے سرہانے بیٹھ گئے اور پکارا۔ “اے بالا پوش اوڑھنے والے ، کھڑے ہو جاؤ پھر ڈر سناؤ، اور اپنے رب ہی کی بڑائی بولو ، اور اپنے کپڑے پاک رکھو ، اور بتوں سے دور رہو ، اور زیادہ لینے کی نیت سے کسی پر احسان نہ کرو، اور اپنے رب کے لئے صبر کرتے رہو، پھر جب صور پھونکا جائے گا تو وہ دن سخت دن ہے ، کافروں پر آسان نہیں۔ قرآن پاک کی 74ویں سورت (المدثر) کی تلاوت کی گئی۔

امام زینی ذہلان کا بیان کردہ غار حرا میں جبریل علیہ السلام کے ساتھ گفتگو کا احوال درج ذیل پڑھا جا سکتا ہے۔ ’’جبریل علیہ السلام عطر کی خوشبو والی خوبصورت شکل میں نمودار ہوئے اور پکارا۔ یا رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم اللہ نے آپ کو سلام کہا ہے۔ اور کہا ہے، ‘آپ انسانوں اور شیاطین کی نسلوں کے لیے میرے رسول ہیں۔ آپ لوگوں کو ایمان کی دعوت دیں۔ “اللہ کے سوا کوئی معبود نہیں اور محمد صلی اللہ علیہ وسلم اس کے رسول ہیں۔” پھر جبرائیل علیہ السلام نے اپنی ایڑی سے زمین پر ٹھوکر ماری۔ وہاں ایک چشمہ پھوٹ پڑا۔ جبریل علیہ السلام نے اس پانی سے وضو کیا۔ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کھڑے دیکھ رہے تھے۔ پھر آپ صلی اللہ علیہ وسلم سے فرمایا کہ ایسا ہی کرو۔ نماز کے لیے جسم کو پاک کرنے کا طریقہ سکھا رہے تھے۔ نبی صلی اللہ علیہ وسلم نے ایسا ہی کیا۔ پھر جبرائیل علیہ السلام کعبہ کی طرف منہ کر کے کھڑے ہوئے۔ جبرائیل علیہ السلام نے فرمایا کہ اکٹھے کھڑے ہو کر عبادت کی پیروی کرو .جبریل علیہ السلام نے نماز پڑھی۔ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے بھی ایسا ہی کیا۔ نماز کے بعد فرشتہ آسمان پر چڑھ گیا۔ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم اپنے گھر واپس آگئے۔ راستے میں پتھر اور ٹہنیوں نے رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کو سلام کیا۔ “السلام علیکم، اللہ کے رسول…” وہ وہاں سے چل کر خدیجہ رضی اللہ عنہا کے پاس آئے۔ آپ نے پیش آنے والے واقعات کو بیان کیا۔ واقعہ سن کر خدیجہ رضی اللہ عنہا بہت خوش ہوئیں۔ آپ صلی اللہ علیہ وسلم کا ہاتھ پکڑ کر دونوں زمزم کے کنویں کی طرف چل پڑے۔ وضو کرنے کا طریقہ بتایا۔ خدیجہ رضی اللہ عنہا نے بھی ایسا ہی کیا۔ پھر آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے نماز پڑھی اور خدیجہ رضی اللہ عنہا نے بھی وہی نماز پڑھی جس طرح آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے پڑھی تھی۔ اس طرح بیوی خدیجہ رضی اللہ عنہا رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کے بعد پہلی مومن اور وضو اور نماز پڑھنے والی پہلی شخصیت بنیں۔

جب یہ سب ہوا، باہر بحث شروع ہو گئی۔ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کی بعثت کی خبر کئی جگہوں پر موضوع بحث بنی۔ مکہ کے لوگ نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم کی ظاہری شکل میں تبدیلیوں کا مشاہدہ کرنے لگے۔ کئی جگہوں پر مکہ والوں کو تلاش کیا گیا اور تفصیلات تلاش کی گئیں۔ بیرون ملک مقیم اہل مکہ اس خبر کی تصدیق کے لیے اپنے وطن واپس آگئے۔ کچھ نے مزید جاننے کے لیے قاصد بھیجے۔

بازاروں اور چراگاہوں میں یکساں بحث چھڑ گئی۔ انسانوں کے علاوہ، شیاطین اور بد روحوں نے بھی کچھ پیغامات پہنچائے۔ گویا تمام جاندار اس عظیم روح کے منتظر تھے جو پوری دنیا پر رحمت کی بارش کرے۔ تمام علاقے جہاں عدل و انصاف کا فقدان ہے، انصاف کے پیامبر کے منتظر تھے۔ غلاموں کی منڈی میں بکنے والے انسان اور وہ جانور جو اپنی استطاعت سے زیادہ اٹھانے پر مجبور تھے، اپنے حقوق کے لیے پکار رہے تھے۔ وہ سب کچھ دنوں سے ایک طرح کی راحت محسوس کرنے لگے۔ وہ امید کر رہے تھے کہ کوئی ان کی رہائی کے لیے اٹھ کھڑا ہوا ہو۔ آئیے پڑھتے ہیں دنیا کے مختلف حصوں میں نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم کے طویل انتظار کے اعلانات کی کہانیاں….

47/365 سیرتِ مصطفیٰ ﷺ

پیارے نبی صلی اللہ علیہ وسلم کے چچا عباس بن عبدالمطلب رضی اللہ عنہ فرماتے ہیں کہ ہم تجارت کے لیے یمن آئے تھے۔ ابو سفیان جو قریش کا ایک سرکردہ تھا، بھی ہمارے ساتھ تھا۔ اسے مکہ سے ایک خط موصول ہوا۔ اسے ان کے بیٹے حنظلہ نے بھیجا تھا۔ خط کا مواد حسب ذیل ہے۔ محمد صلی اللہ علیہ وسلم مکہ کی وادی میں نبی کی حیثیت سے داخل ہوئے ہیں اور وہ اللہ کا رسول ہونے کا دعویٰ کرتے ہیں .اور ہم سب کو رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کے راستے کی طرف دعوت دیتے ہیں ۔

ابو سفیان نے خط کا مواد بہت سے لوگوں سے شیئر کیا۔ اور یوں یہ خبر یمن میں پھیل گئی۔ یمن میں ایک بزرگ پادری نے یہ خبر سن کر ہم سے رابطہ کیا۔ کیا یہ سچ ہے کہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کے چچا( جو رسول مکہ میں ظہور پذیر ہوئے ہیں) آپ میں موجود ہیں؟ ہاں، یہ میں ہی ہوں۔ ٹھیک ہے، لیکن میں چند سوالات پوچھنا چاہتا ہوں اور آپ کو صرف صحیح معلومات دینی چاہیے۔ پادری نے کہا۔ میں راضی ہو گیا اور وہ پوچھنے لگا۔ کیا آپ کے بھتیجے نے کبھی جھوٹ بولا ہے؟ نہیں، کبھی جھوٹ یا دھوکہ نہیں دیا۔ مکہ میں ہر کوئی اسے “الامین” یا وفادار کہتا ہے۔ اگلا سوال یہ تھا کہ کیا بیٹا پڑھا لکھا ہے؟ میں نے ‘ہاں’ میں جواب دینے کا سوچا۔ لیکن مجھے شک تھا کہ ابو سفیان اس کی تصحیح کرے گا یا نہیں۔ تو میں نے کہا ‘نہیں’۔ اس نے پڑھنا یا لکھنا نہیں سیکھا۔ پادری یہ سن کر اچھل پڑا، اپنا بیرونی لباس اتار کر چلایا۔ یہودیوں کا وجود خطرے میں ہو گا۔

حضرت عباس رضی اللہ عنہ بیان کرتے ہوئے کہتے ہیں کہ ۔ ہم اپنے گھروں کو لوٹ گئے۔ ابو سفیان نے فوراً کہا اے! ابوالفضل آپ کے بھتیجے کی خبر سے تو یہودی بھی کانپ گئے ہیں؟ ہاں میں نے بھی اسے نوٹس کیا ہے۔ او! ابو سفیان کیا آپ بھی اس نبوت کو مانتے ہیں؟ .نہیں میں متفق نہیں ہوں۔ میں اسے اس وقت تک قبول نہیں کروں گا جب تک کہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کی فوج وادی کدائی کے ذریعے مکہ فتح کرنے کے لیے نہ آئے۔ اس نے کہا۔ تم ایسی بات کیوں کر رہے ہو؟ میں نے اس سے پوچھا۔ مجھے نہیں معلوم کہ وادی کدائی سے فوج آئے گی یا نہیں لیکن میں نے کہا کہ اچانک میری زبان پر کیا آگیا ۔

(تقریباً دو دہائیوں کے بعد مکہ فتح ہوا، اسلام کے گھڑ سوار دستے وادی کدائی سے ہوتے ہوئے مکہ میں داخل ہوئے، حضرت عباس رضی اللہ عنہ نے اسے دیکھا اور قریب ہی کھڑے ابو سفیان سے کہا، جس لشکر کا آپ نے پہلے ذکر کیا تھا وہ آنے والا ہے۔ قریب ہے، ہاں مجھے اچھی طرح یاد ہے، میں اس دن کی باتیں نہیں بھولا، میں نے اسلام قبول کیا، اس نے فتح مکہ کے دن اسلام کا اعلان کیا۔

ایک اور روایت ابن عساکر رضی اللہ عنہ سے آئی ہے۔ عبدالرحمن بن عوف رضی اللہ عنہ بیان کرتے ہیں۔ نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم کی نبوت کے اعلان سے پہلے ہم یمن گئے تھے۔ ہم شاہی خاندان میں رہتے تھے۔ ہمارا میزبان شاہی خاندان کا ایک بوڑھا آدمی تھا جس کا نام عسقلان الحمیری تھا۔ میں جب بھی یمن جاتا تو اس کے پاس رہتا تھا۔ وہ مکہ کی تفصیلات پوچھتا تھا۔ دیر تک بیٹھ کر مکہ کے قصے سنتا رہتا تھا۔ وہ پوچھتا کہ کوئی نیا پیغام لے کر آیا ہے۔ میں کہتا ‘نہیں”.

ہمیشہ کی طرح اس بار بھی ہم الحمیری کے گھر پہنچے، اس کی بصارت اور سماعت کم ہوگئی تھی۔ وہ اپنے بچوں اور پوتوں کے ساتھ دیوار سے ٹیک لگائے بیٹھا تھا۔ میں ابھی قریب ہوا ہی تھا کہ اس نے پوچھا. اے میرے بھائی قریش! قریب کھڑے ہو جاؤ اور مجھے اپنا نام اور خاندان صاف صاف بتاؤ۔ میں نے اپنا نام اور نسب بتایا.. فوراً بولا۔ کافی ہو گیا… آپ قبیلہ بنو زہرہ سے ہیں، ہے نا؟ لیکن میں آپ کو اچھی خبر سناؤں گا۔ یہ تجارت سے کہیں زیادہ خوش کن ہے۔ لیکن اچھی خبر کیا ہے. میں نے پوچھا…

48/365 سیرتِ مصطفیٰ ﷺ

حمیری کہنے لگا۔ ‘یہ بہت امید افزا خبر ہے۔ ایک انتہائی حیران کن خبر۔ ایک مہینہ پہلے اللہ تعالیٰ نے آپ کے ملک میں ایک متقی آدمی کو اپنا رسول بنایا ہے۔ وہ اللہ کا بہترین دوست ہے۔ اسے ایک مقدس کتاب بھی ملی ہے۔ وہ بت پرستی کو روکے گا۔ وہ سچائی کی تبلیغ کرے گا۔ برائی کے خلاف کام کرے گا اور اسلام کی دعوت دے گا۔ میں نے پوچھا. وہ کون ہے ؟ نبی کس خاندان سے ہے؟ پھر حمیری نے کہا۔

اسد، شمائلہ، سرو، طبالہ قبائل سے نہیں۔ وہ نبی ہاشم کی نسل سے آئے ہیں۔ پھر تم ان کے چچاؤں میں ہو گے۔ اے عبدالرحمٰن جلدی سے اپنے ملک واپس جاؤ۔ مناسب احترام کے ساتھ اس شخصیت کو دیکھیں۔ اس کے قریبی دوست بن جائیں۔ اور آپ ان کی مدد کریں جتنا آپ سے ہو سکے۔ جب تم ملو تو ان کو میرا سلام پہنچاؤ۔ اس کے بعد آپ صلی اللہ علیہ وسلم کو سلام پیش کرتے ہوئے ایک نظم پڑھی۔

عبدالرحمٰن بن عوف رضی اللہ عنہ کہتے ہیں۔ میں نے وہ نظم اچھی طرح یاد کر لی۔ میں نے اپنے کاروباری سودے تیزی سے مکمل کئے اور اپنے ملک واپس آ گیا۔ میں اپنے ملک پہنچتے ہی اپنے روحانی ساتھی ابوبکر رضی اللہ عنہ سے ملا۔ میں نے معلومات شیئر کیں۔ اس معاملے پر تفصیلی تبادلہ خیال کیا۔ . پھر آپ نے فرمایا۔ ہمارے پیارے محمد بن عبداللہ نے اپنی نبوت کا اعلان کر دیا۔ چنانچہ میں رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کے پاس گیا۔ میں خدیجہ رضی اللہ عنہا کے گھر پہنچا۔ محمد صلی اللہ علیہ وسلم وہاں چند پیروکاروں کے ساتھ تھے۔ آپ
نے بڑی مسکراہٹ کے ساتھ میرا استقبال کیا۔

آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے بات جاری رکھتے ہوئے فرمایا۔ کیا آپ مجھے کوئی خاص پیغام دینے کے لیے نہیں آئے؟ یہ سن کر میں پرجوش ہو گیا۔ میں نے تمام واقعات اور پیغام سنایا۔ پھر آپ نے فرمایا۔ الحمیری ایک ممتاز شخصیت ہیں۔ کتنے لوگ مجھے جانے بغیر مجھ پر یقین رکھتے ہیں! کتنے لوگ مجھے دیکھے بغیر بھی مجھ پر یقین کرتے ہیں! وہ دراصل میرے بھائی ہیں۔ ابن عوف رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کے پیرو بن گئے۔

آئیے بصرہ شہر کی خبریں بھی پڑھیں۔ مکہ کے ایک ممتاز تاجر طلحہ بن عبید اللہ رضی اللہ عنہ کہتے ہیں۔ میں نبوت کے اعلان کے وقت بصرہ شہر میں تھا.. میں نے وہاں یہودیوں کی عبادت گاہ سے ایک اعلان سنا۔ ‘ وہ لوگ توجہ فرمائیں جو یہاں تجارتی میلے کے لیے پہنچے ہیں۔ کوئی ہے جو مکہ حرم سے آیا ہو؟ میں وہاں گیا اور کہا۔’ میں حرم سے ہوں۔ تم نے کیوں بلایا ہے؟ گرجا گھر کے یہودی راہب نے کہنا شروع کیا۔ کیا رسول اللہ ﷺ کا ظہور ہوا؟ احمد؟ وہ کون ہے؟. میں نے پوچھا۔

اس نے بات کو جاری رکھتے ہوئے کہا۔احمد، عبداللہ کا بیٹا، عبدالمطلب کا بیٹا۔ یہ وہ مہینہ ہے جس میں نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم دنیا میں تشریف لائیں گے۔ آپ صلی اللہ علیہ وسلم آخری نبی ہیں۔ سرزمین حرم سے اٹھیں گے ۔ وہ کھجوروں کی سرزمین کی طرف ہجرت کرینگے.. جلدی مکہ واپس جاؤ۔ دوسروں سے پہلے اس نبی صلی اللہ علیہ وسلم کی پیروی کرو۔

طلحہ رضی اللہ عنہ فرماتے ہیں۔ ‘ یہ الفاظ میرے دل پر چپک گئے۔ میں نے کاروبار کی ضروریات جلد پوری کیں اور وطن واپس آگیا۔ راہب کے الفاظ پورے سفر میں میرے دل میں گردش کر رہے تھے۔

49/365 سیرتِ مصطفیٰ ﷺ

حضرت طلحہ رضی اللہ عنہ نے بات کو جاری رکھتے ہوئے کہا۔ ‘ملک پہنچتے ہی میں نے تفصیلات تلاش کیں۔ مقامی لوگوں نے کہا کہ اچھی خبر ہے۔ ہمارے عبداللہ کے بیٹے محمد صلی اللہ علیہ وسلم یا الامین نے نبوت کا اعلان کیا ہے۔ ابو قحافہ کے بیٹے ابوبکر رضی اللہ عنہ پہلے پیروکار بن گئے ہیں۔ میں نے سیدھے سیدھے ابوبکر رضی اللہ عنہ سے رابطہ کیا۔

ہم دونوں رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کے پاس گئے۔ ابوبکر رضی اللہ عنہ نے رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کو وہ تمام معلومات بتا دیں جو میں نے آپ کو بتائی تھیں۔ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم بہت خوش ہوئے۔ طلحہ رضی اللہ عنہ نے خود اپنے ایمان کا اعلان کیا۔ بعد میں وہ ان دس ممتاز جانثاروں میں سے ایک بن گئے جنہیں جنت کی بشارت ملی۔

آئیے نجران سے ایک اور خبر پڑھتے ہیں۔ روایتی طور پر، نجران وہ جگہ تھی جہاں راہب رہتے تھے۔ ہر پادری ان دستاویزات کو اپنے پاس رکھتا تھا جو اپنی زندگی کے آخر میں مہر بند اور حوالے کر دی جاتی تھیں۔ وہ راہب جو اعلان نبوت کے وقت نجران میں موجود تھا ایک مرتبہ اس کا پاؤں پھسل گیا اور گر پڑا۔ فوراً اس کے بیٹے نے کہا۔ “افسوس اس کے لیے جو دور سے اٹھے”۔ تب عقلمند باپ نے کہا۔ ‘ایسی باتیں مت کرو۔ جو آئے گا وہ سچا نبی ہے۔ اس عظیم روح کا نام اور خصوصیات ہمارے صحیفوں میں نظر آتی ہیں۔

کچھ دنوں بعد والد کا انتقال ہوگیا۔ بیٹے نے صحیفوں اور قدیم ریکارڈوں کا اچھی طرح مطالعہ کیا۔ اس نے دستاویزات سے رسول اللہ ﷺ کے بارے میں کافی معلومات حاصل کیں۔ اس نے محمد صلی اللہ علیہ وسلم کی نبوت کو قبول کیا۔ مکہ گئے اور حج کیا۔ وہ اشعار گاتے ہوئے رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم سے ملنے گئے ۔

ہم نے اب تک دنیا کے مختلف حصوں میں ہونے والے اعلانات اور نبی صلی اللہ علیہ وسلم کے اعلان نبوت کے بعد ہونے والے حقائق پڑھے ہیں۔ اب خود مکہ واپس چلتے ہیں۔

اعلان نبوت کے بعد رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم ایک ماہ تک گھر میں رہے۔ وہ مسلسل عبادت کے دن تھے۔ یہ مشن کے لیے خود تیاری جیسا تھا۔ مکہ میں ہر جگہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کی تنہائی کا چرچا تھا۔ الامین جو عموماً خانہ کعبہ کے احاطے میں ہوتے تھے، اب بالکل نظر نہیں آتے؟ کچھ لوگوں نے کہا کہ ہمارے ملک میں خدمت خلق کرنے والا لیڈر کہیں نظر نہیں آتا۔ وہ اس کی غیر موجودگی کی وجوہات کا تصور کر رہے تھے۔ آپ صلی اللہ علیہ وسلم کے چچا زاد بھائیوں اور پھوپھیوں نے خاندان میں بحث شروع کر دی۔ اسی وقت اللہ تعالیٰ کی طرف سے حکم آیا “و انذر…” اپنے قریبی رشتہ داروں کو خبردار کر دو۔” یہ ایک نصیحت تھی جس میں واضح کیا گیا تھا کہ کیسے شروع کیا جائے اور کہاں سے شروع کیا جائے، پیارے نبی صلی اللہ علیہ وسلم نے اس اعلان کو بخوشی قبول کر لیا، آپ نے تمام سربراہان کو بلایا۔ خاندانوں کی ایک اچھی دعوت بھی تیار کی گئی، تقریباً چالیس سے پینتالیس افراد موجود تھے، مختلف خاندانوں کے نمائندوں میں سے ایک ایک سے خطاب کیا، صفا پہاڑی کی چوٹی پر کھڑے ہو کر پکارا، اے عبد مناف کے بیٹو! . …اے بنی ہاشم ..عباس ..نبی کریم کے چچا ..پھوپھی صفیہ ..اے عبدالمطلب کے خاندان ..میری پیاری بیٹی فاطمہ ..میں نے اللہ سے کچھ ایسا حاصل نہیں کیا ہے کہ تم میرے مال میں سے کچھ بھی مانگو۔

میں تم سے ایک بات پوچھوں.. اگر میں تمہیں بتاؤں کہ اس پہاڑ کے پیچھے سے گھڑسوار فوج آرہی ہے تو کیا تم یقین کرو گے؟ وہ کہنے لگے. آج تک ہمیں محمد صلی اللہ علیہ وسلم سے جھوٹ بولنے کا کوئی تجربہ نہیں ہوا، لہٰذا ہم یقین کریں گے۔ تو سنو میں اعلان کرتا ہوں۔ میں اللہ کی طرف سے تمہاری طرف بھیجا ہوا ڈرانے والا ہوں۔

50/365 سیرتِ مصطفیٰ ﷺ

عربوں میں سے کسی نے بھی اپنے گھر والوں کو ایسی نیکی نہیں دی ہوگی جو میں تمہیں دے رہا ہوں۔ میں آپ کو یقین دلاتا ہوں کہ یہ نیکی دونوں جہانوں میں بہترین ہے۔ میں آپ کو کامیابی کی دعوت دیتا ہوں۔ آپ کو اس راستے میں میرے ساتھ ہونا چاہیے .جو لوگ جمع تھے سب نے توجہ سے نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم کا ارشاد سنا۔ لیکن صرف ابو لہب کو یہ پسند نہیں آیا۔ اس نے پوچھا. کیا یہ کہنے کے لیے ہمیں یہاں بلایا گیا ہے؟ تجھ پر افسوس..محمد…اس نے” تبن لك یا محمد” کا جملہ استعمال کیا۔ پیارے نبی صلی اللہ علیہ وسلم کو مشکل پیش آئی۔ لیکن اللہ نے رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کو راضی کیا۔ قرآن کریم نے ابو لہب کے ساتھ اس کے ہی انداز میں سلوک کیا۔ ‘تبت یداہ.. قرآن کا ایک سو گیارہویں سورت نازل ہوئی۔ اس کا مطلب اس طرح ہے۔ “ابو لہب کے دونوں ہاتھ تباہ ہوگئے، اس کی کامیابیاں اور دولت اس کے کچھ کام نہیں آئے گی۔ وہ جلتی ہوئی جہنم میں داخل ہو گا جس کے شعلے بلند ہوں گے، اور اس کی بیوی، اس کے گلے میں کھجور کی رسی ہو گی۔” (یہ سب کچھ بعد میں ہوا)۔ لیکن نوجوان علی رضی اللہ عنہ نے خاندانی اجتماع میں اپنے ایمان کا اظہار کیا۔ انہوں نے کہا کہ وہ کسی بھی مرحلے پر رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کے ساتھ ہوں گے۔

پیارے نبی صلی اللہ علیہ وسلم گھر واپس آئے اور عبادت اور مراقبہ میں وقت گزارا۔ تبلیغ کا نتیجہ صاف دیکھا جا سکتا تھا۔

مکہ میں ہر جگہ نئے طریقہ کار کے بارے میں گفتگو چل رہی تھی ‘نبی’، ‘رسول’، ‘وحی’……
یہ وحی کیا ہو گی؟ یہ نبی کون ہوگا؟ آئیے سیکھنے کی کوشش کرتے ہیں۔

عربی لفظ ‘وحی’ کا بنیادی معنی الہی تعلیم اور الہی وحی ہے۔ لیکن عام معنی بالواسطہ طور پر معلومات پہنچانا ہے۔ وہ منفرد طریقہ جس میں اللہ رب العالمین اپنے پیغمبروں تک پیغام پہنچاتا ہے۔ یہ تکنیکی طور پر وحی کا مقصد ہے۔ عام لوگوں کے لیے وحی کو اس کے مکمل معنی میں سمجھنے کی حدود ہیں۔ اس کی ایک وجہ یہ ہے کہ ہمیں تجربہ کرنے والوں سے براہ راست تجربہ کرنے یا سمجھنے کا موقع نہیں ملتا۔
وحی کے مختلف طریقے ہیں۔
پہلا: خواب کے ذریعے موصول ہونے والے خصوصی پیغامات ہیں۔ نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم کا ہر خواب طلوع فجر کی طرح پورا ہو گا۔جیسے حضرت ابراہیم علیہ السلام کو خواب میں اپنے بیٹے کو قربان کرنے کا پیغام ملا۔

دوسرا : فرشتے کے ذریعے نبی صلی اللہ علیہ وسلم کے شعور یا فکر تک پیغام پہنچانا۔ پھر فرشتے کو منظر پر آنا نہیں پڑتا۔ احادیث میں بھی اسی طرح کے الفاظ ملتے ہیں۔ ایک دفعہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا: روح القدس نے میرے دل میں پیغام پہنچایا۔ ‘کوئی بھی جسم پہلے سے طے شدہ خوراک کو پورا کیے بغیر نہیں مرتا۔ اس لیے تقویٰ اختیار کرو اور اپنے وسائل کو حلال طریقے سے جمع کرو۔ جب تکلیف آئے تو ان طریقوں پر عمل نہ کریں جن کی خالق نے اجازت نہیں دی ہے۔

تیسرا: فرشتہ اپنی شکل میں آتا ہے اور پھر پیغام پہنچاتا ہے۔ اس کے ساتھ بعض اوقات گھنٹیاں بھی بجتی ہیں۔ احادیث میں دیکھا گیا ہے کہ یہ وحی کا سب سے مشکل طریقہ تھا۔ گھنٹی محض ایک ترجمہ ہے اور ہم اس کی صحیح شکل یا اظہار کو نہیں سمجھ سکتے۔ ایسے حالات میں روایات کو قبول کرنے کے سوا کوئی چارہ نہیں ہے۔

چوتھا: وہ طریقہ جس میں فرشتہ آدمی کی شکل میں آیا اور پیغام پہنچایا۔ پھر سامعین جبریل کو بھی دیکھ سکتے تھے۔ لیکن آنحضرت صلی اللہ علیہ وسلم کو خود آنے والے کو جبرائیل کے نام سے متعارف کرانا پڑا۔ مشہور حدیث جس میں ایمان اور اسلام کے معاملات کو بیان کیا گیا ہے اس میں جبریل علیہ السلام کے انسانی شکل میں آنے کا بیان ہے۔ مذکورہ حدیث کو حدیث جبریل کے نام سے بھی جانا جاتا ہے۔ کئی بار جبرائیل علیہ السلام ایک ممتاز صحابی کی شکل میں آئے ہیں جن کا نام “دحیۃ الکلبی” رضی اللہ عنہ ہے۔

Leave a Reply